Monday , May 28 2018
Home / شہر کی خبریں / مانو میں ‘ڈیجیٹل سوشل ورک ‘ پر توسیعی لکچر کا انعقاد

مانو میں ‘ڈیجیٹل سوشل ورک ‘ پر توسیعی لکچر کا انعقاد

حیدرآباد، 15؍ نومبر (پریس نوٹ) پروفیسر عبدا لمتین، شعبۂ سماجیات، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی نے توسیعی لکچر میں کہا کہ طلبہ ٹکنالوجی سے واقف ہونے کے ساتھ اس کے سماجی اثرات پر بھی گہری نظر رکھیں۔وہ کل مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی میں ’’ڈیجیٹل سوشل ورک‘‘ کے زیر عنوان توسیعی لکچر دے رہے تھے۔ پروفیسر عبدالمتین، اردو یونیورسٹی کے مرکز برائے مطالعاتِ سماجی علیحدگی و شمولیاتی پالیسی کے ڈائرکٹر رہ چکے ہیں۔ انہوں نے اکیسویں صدی میں انفارمیشن ٹکنالوجی کی وجہ سے پیدا ہونے والے نت نئے انسانی مسائل کی نشاندہی کی اور ساتھ ہی ساتھ تکنیکی ترقی کے فوائد بھی بتائے۔ انہوں نے کہا کہ ٹکنالوجی کی معلومات اور اس کا استعمال کرکے ایک سوشل ورک پیشہ ور بہت سارے مسائل کو دور کر سکتا ہے۔ ہر دور کے سماجی اور معاشی تقاضوں سے ہم آہنگ ہونے کے لیے ہر پیشے کواپنے کام کے طریقے، علم اور مہارتوں میں اضافہ کرنا چاہیے۔ انہوں نے ٹکنالوجی کی بدولت ہونے والی سماجی تبدیلیوں کا تفصیل سے ذکر کیا ۔اس لکچر کا بنیادی مقصد ایم ایس ڈبلیو کے طلبا و طالبات اور ریسرچ اسکالرز کو سوشل ورک کے عملی میدان میں انفارمیشن ٹکنالوجی اور سوشل ورک پریکٹس کی اہمیت و افادیت سے روشنا س کرانا تھا تاکہ وہ اس اہم اور ضروری موضوع کو اپنے مستقبل میں زیر بحث لا سکیں۔ آخر میں سوالات اورجوابات کا سلسلہ رہا جس میں طلبہ نے مختلف تصوراتی اور عملی سوالات پوچھے۔ جناب محمد اسرار عالم، اسسٹنٹ پروفیسر نے مہمان کا استقبال کیا اور ان کا مختصرا تعارف پیش کیا۔ لکچر کے اختتام پر شعبہ صدر اور اسوسیئٹ پروفیسر ڈاکٹر محمد شاہد رضا نے صدارتی کلمات کہے اور طلبہ سے مخاطب ہوتے ہوئے انہوں نے ڈیجیٹل سوشل ورک جیسے اہم عصری تقاضے اور سوشل ورک پروفیشن کی مناسبت اور رابطے پر زور دیا۔ ڈاکٹر رضا نے طلبہ سے خواہش کی کہ وہ اس طرح کے موضوعات سے منسلک ہوکر فیلڈ میں سوشل ورک کے خصوصی علم اور مہارتوں کا استعمال کریں۔

TOPPOPULARRECENT