Monday , October 15 2018
Home / شہر کی خبریں / ماونٹ ایورسٹ سر کرنے والی کم عمر ترین لڑکی پورنا

ماونٹ ایورسٹ سر کرنے والی کم عمر ترین لڑکی پورنا

تلنگانہ کی غریب قبائیلی لڑکی کا کارنامہ ،آنند پہلا دلت کوہ پیما

تلنگانہ کی غریب قبائیلی لڑکی کا کارنامہ ،آنند پہلا دلت کوہ پیما

نئی دہلی 25 مئی (سیاست ڈاٹ کام) تلنگانہ علاقہ کی قبائیلی لڑکی پورنا دنیا کی سب سے بلند ترین پہاڑی چوٹی ایورسٹ سر کرنے والی سب سے کم عمر لڑکی بن گئی ۔ 13 سالہ اور 11 ماہ عمر کی قبائیلی لڑکی پورنا نے آج ایورسٹ کی چوٹی کو مسخر کرلیا ۔ وہ آندھرا پردیش کے ضلع نظام آباد کے ایک کھیت مزدور کی بیٹی ہے اور سرکاری سوشیل ویلفیر ہاسٹل میں نویں جماعت کی طالبہ ہے اس کے ساتھ اس جماعت کا ایک طالبعلم آنند بھی ہے جو اس ریاست کے ضلع کھمم میں ایک سائیکل میکانک کا بیٹا ہے جو سمجھا جاتا ہے کہ ہمالیہ کی بلند چوٹی سر کرنے والا پہلا دلت ہے ۔ ان دونوں نے ایک ایسے وقت اپنے ناممکن نظر آنے والے خوابوں کو حقیقت میں بدلنے کی تیاری کی جبکہ ان کے خاندان دو وقت کی روٹی کیلئے جدوجہد میںمصروف ہیں ۔ ان حالات کی پرواہ کئے بغیر ہمالیائی عزموں ،ارادوں کے ساتھ ان دونوں نے بالآخر اپنے خواب کو حقیقت میں تبدیل کردکھایا جس سے ملک میں لاکھوں بچوں اور نوجوانوں کو ایک نئی امنگ مل گئی۔ پورنا اور آنند گذشتہ سال نومبر میں ایسے ایک درجن نو عمر لڑکے لڑکیوں میں شامل تھے جنہوں نے کوہ ریناک کو سر کیا تھا جبکہ ابتداء میں انہیں بہت ہی کم عمری کے سبب تربیت دینے سے انکار کیا گیا تھا۔

لیکن کوہ ریناک سر کرنے کے بعد اس گروپ میں جس میں دیگر بچے بھی پورنا اور آنند جیسے غریب خاندانی پس منظر کے حامل ہیں، ہمالیہ کی چوٹی کو سر کرنے کا خواب اپنے آنکھوں میں بسا لیا۔ پورنا اپنی تعلیم جاری رکھنا چاہتی ہے اور آئی پی ایس افسر بننا چاہتی ہے ۔ وہ ایک آئی پی ایس افسر پروین کمار کی خدمات اور شخصیت سے متاثر ہے ۔پروین کمار سکریٹری آندھرا پردیش سوشیل ویلفیر ہاسٹلس ہیں جو درحقیقت پورنا کو اس منزل تک پہنچانے میں کلیدی رول ادا کرچکے ہیں اور انہوں نے ہی پورنا کو اس ٹیم میںشامل کرتے ہوئے دنیا کی بلند ترین پہاڑی چوٹی کو سر کرنے کا موقع فراہم کیا۔ یہ بھی ایک عجیب اتفاق ہے کہ 60 سال قبل یعنی 29 مئی 1953کو نیوزی لینڈ کے اڈمینڈ ہلاری اور ان کے شیرپا تنژنگ نارگے نے سب سے پہلے ہمالیائی چوٹی کو سر کرنے کا ریکارڈ قائم کیا تھا اور اتفاق سے یہ ہفتہ کوہ ہمالیہ کو مسخر کرنے کی 61 ویں سالانہ یاد کے طور پر منایا جارہا ہے ۔ 60 سال کی مدت میں تاحال 4,000 مرد و خواتین 8,850 میٹر بلند پہاڑی کو سر کرچکے ہیں۔ ہر سال 25مئی تک ایورسٹ پر چڑھائی جاری رہتی ہے جس کے بعد درجہ حرارت میں چونکہ اضافہ ہوجاتا ہے اور پہاڑی راستے بہت زیادہ خطرناک ہوجاتے ہیں اس لئے کوہ پیمائی کی مہم روک دی جاتی ہے ۔ واضح رہے کہ گذشتہ ماہ اپریل کے دوران نیپال کی سمت ہمالیائی پہاڑیوں پر برفیلے تودے کھسکنے کے سبب 16کوہ پیما ہلاک ہوگئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT