Tuesday , December 18 2018

مجھے علیل والدین کی فکر لاحق ہے

سری نگر۔ 14؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ جموں و کشمیر کے اسمبلی حلقہ سوناور میں آج چیف منسٹر عمر عبداللہ نے حق رائے سے استفادہ کیا۔ وہ پہلی مرتبہ اس حلقہ سے مقابلہ کررہے ہیں، تاہم انھوں نے کہا کہ وہ اپنے والدین کے بارے میں فکرمند ہیں جو برطانیہ میں اعضاء کی پیوندکاری سے گزر رہے ہیں۔ عمر عبداللہ نے ٹوئٹر پر کہا کہ اس وقت مجھے صرف اپنے والدی

سری نگر۔ 14؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ جموں و کشمیر کے اسمبلی حلقہ سوناور میں آج چیف منسٹر عمر عبداللہ نے حق رائے سے استفادہ کیا۔ وہ پہلی مرتبہ اس حلقہ سے مقابلہ کررہے ہیں، تاہم انھوں نے کہا کہ وہ اپنے والدین کے بارے میں فکرمند ہیں جو برطانیہ میں اعضاء کی پیوندکاری سے گزر رہے ہیں۔ عمر عبداللہ نے ٹوئٹر پر کہا کہ اس وقت مجھے صرف اپنے والدین کی فکر لاحق ہے۔ ان دونوں نے آج سرجری کی تیاری کرلی ہے۔ میری نیک تمنائیں ان کے ساتھ ہیں اور کاش میں بھی اس وقت ان کے قریب ہوتا؟ چیف منسٹر نے گزشتہ سال لوک سبھا انتخابات میں اپنے والد کی موجودگی کا تذکرہ کیا۔ انھوں نے کہا کہ سات ماہ قبل میرے والد محترم نے رائے دہی سے استفادہ کیا تھا اور انھوں نے یہ بھی یاد دلایا کہ اُس وقت انھوں نے خود اپنی تصویر لی تھی۔ آج میں سوچتا ہوں کہ مجھے بھی اپنی تصویر (سیلفائی) لینی چاہئے۔ فاروق عبداللہ نیشنل کانفرنس کے لوک سبھا انتخابات میں امیدوار تھے، لیکن انھیں پہلی مرتبہ پی ڈی پی امیدوار طارق حامد کرا کے مقابلہ شکست کا مزہ چکھنا پڑا۔ تقریباً چار دہوں میں پہلی مرتبہ 77 سالہ فاروق عبداللہ نے اسمبلی انتخابات میں اپنی پارٹی نیشنل کانفرنس کی انتخابی مہم کی قیادت نہیں کی۔ وہ گزشتہ چار ماہ سے گردے ناکارہ ہونے کے باعث برطانیہ میں زیر علاج ہیں۔ آج حق رائے سے استفادہ کے بعد عمر عبداللہ نے کہا کہ انھیں مخالف حکومت رجحان کی پرواہ نہیں، کیونکہ یہ رجحان کبھی فائدہ مند بھی ہوتا ہے۔ ہم نے کئی اچھے کام کئے ہیں اور انھیں پورا بھی کیا ہے۔ انھیں یقین ہے کہ عوام اسے تسلیم کرتے ہوئے ووٹ کی شکل میں اپنا فیصلہ سنائیں گے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT