Saturday , November 17 2018
Home / کھیل کی خبریں / مجھ پر کوئی دباؤ نہیں:سرفراز

مجھ پر کوئی دباؤ نہیں:سرفراز

دبئی ۔5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام ) پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا ہے کہ مجھ پر کوئی دباؤ نہیں ہے، میں تینوں فارمیٹ میں کپتانی اور بحیثیت کھلاڑی بھرپور طریقے سے لطف اندوز ہورہا ہوں۔ انٹرویومیں سرفراز احمد نے کرکٹ کمیٹی کے چیئرمین محسن خان کے بیان پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان پر کپتانی سے متعلق کوئی دباؤ نہیں ہے۔ وہ تینوں فارمیٹ میں اپنی کپتانی سے لطف اندوز ہورہے ہیں اور ٹیم کی مجموعی کارکردگی سے بھی مطمئن ہیں۔ واضح رہے کہ چند روز قبل پاکستان کی کرکٹ کمیٹی کے چیئرمین محسن خان نے کہا کہ سرفراز احمد پر سے دباوکم کرنے کے لیے ان سے ٹسٹ کی کپتانی لے لی جائے تاکہ وہ کرکٹ کے اس طویل فارمیٹ میں اپنے کھیل پر توجہ دے سکیں۔ ٹیم کے کپتان نے ٹی ٹوئنٹی فارمیٹ میں شاندار کارکردگی پر بات کرتے ہوئے کہا کہ مسلسل 11 سیریز جیتنا آسان نہیں تھا۔ انہوں نے کہا کہ ٹیم اس کامیابی کا تمام سہرا ٹیم مینجمنٹ اور پوری ٹیم کو جاتا ہے جنہوں نے مسلسل محنت سے اس مقام کو حاصل کیا۔ سرفراز احمد نے شکوہ کیا کہ ٹیم نے ٹی ٹوئنٹی فارمیٹ میں جس شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا شاید اس کو اس لحاظ سے پذیرائی نہیں مل سکی لیکن ٹیم نے سب کو اپنی کارکردگی سے متاثر ضرور کیا ہے۔ ایشیا کپ میں حالیہ ناکامی اور ونڈے کرکٹ میں پاکستان ٹیم کی ناقص کارکردگی کے حوالے سے کپتان نے کہا کہ ہم ٹی ٹوئنٹی کے ساتھ ساتھ ونڈے کرکٹ میں بھی ٹیم کی کارکردگی بہتر بنانے کے لیے کوشاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایشیا کپ میں کارکردگی توقعات کے مطابق نہیں تھی لیکن ایشیا کپ کے بعد آسٹریلیا کے خلاف ٹسٹ اور ٹی ٹوئنٹی پھر نیوزی لینڈ کے خلاف ٹی ٹوئنٹی سیریز میں کامیابی کے بعد ٹیم کا حوصلہ بلند ہوا ہے۔ آئندہ سال انگلینڈ میں ہونے والے ورلڈکپ کے حوالے سے سرفراز نے کہا کہ نیوزی لینڈکے خلاف ونڈے سیریز ہمارے پاس بہترین موقع ہے اور پوری کوشش ہے کہ ورلڈ کپ کے حوالے سے بہترین ٹیم کمبی نیشن تیار کیا جائے جبکہ امید ہے کہ ورلڈ کپ سے قبل ہم بہترین موقف میں ہوں گے اور ٹیم ایونٹ میں اچھے نتائج دے گی۔ ونڈے کرکٹ اور خصوصاً انگلینڈ میں ہونیوالے ورلڈ کپ میں عباس کی شمولیت کے بارے میں بات کرتے ہوئے سرفراز احمد نے کہا کہ محدود اووز کی کرکٹ میں پاکستان کے پاس فاسٹ بولنگ میں بہترین متبادل موجود ہیں، اگر موقع ملا تو عباس کو ونڈے کرکٹ میں بھی آزمایا جاسکتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT