Tuesday , December 11 2018

محمد فرید الدین کی کانگریس سے معطلی کے خلاف احتجاج

گیتا ریڈی کی شکایت پر وجہ نمائی نوٹس کے بغیر کارروائی افسوسناک

گیتا ریڈی کی شکایت پر وجہ نمائی نوٹس کے بغیر کارروائی افسوسناک
حیدرآباد /12 اگست (سیاست نیوز) کانگریس قائدین اور کارکنوں نے سابق ریاستی وزیر محمد فرید الدین کی معطلی کے خلاف گاندھی بھون کے لائبریری ہال میں احتجاجی جلسہ منعقد کیا اور پنالہ لکشمیا کا پتلہ نذر آتش کی۔ واضح رہے کہ سابق وزیر و کانگریس رکن اسمبلی ڈاکٹر گیتا ریڈی کی شکایت پر کانگریس قیادت نے بغیر کسی وجہ نمائی نوٹس جاری کئے کئے فوری اثر کے ساتھ سابق ریاستی وزیر و جنرل سکریٹری پردیش کانگریس محمد فرید الدین کو پارٹی سے معطل کردیا، جن پر مخالف پارٹی سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا الزام عائد کیا گیا تھا۔ گاندھی بھون میں منعقدہ اجلاس میں سابق صدر نشین ریاستی اقلیتی کمیشن یوسف قریشی کے علاوہ دیگر کانگریس قائدین مسرز رضا حسین آزاد، محمد جہانگیر، خواجہ ذاکر الدین، اسماعیل الرب انصاری، ایم ایم بیگ، حبیب زین العابدین، قادر شریف، عبد القدوس، شاہد پیراں، محمد کبیر، وجیہہ الدین شاہین اور دیگر نے شرکت کی۔ اس موقع پر سید یوسف قریشی نے کہا کہ وہ کانگریس پارٹی تادیبی کمیٹی کے رکن کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے ہیں، لہذا وجہ نمائی نوٹس جاری کئے بغیر کسی کی معطلی کا کسی کو اختیار نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ پردیش کانگریس کمیٹی کی عاملہ ہائی کمان کی منظورہ ہوتی ہے، لہذا صدر پردیش کانگریس کو اختیار نہیں ہے کہ وہ جنرل سکریٹری کے عہدہ پر فائز کسی شخص کو پارٹی سے معطل کریں، ہاں صدر پردیش کانگریس صرف سکریٹریز اور جوائنٹ سکریٹریز کو معطل کرسکتے ہیں، جب کہ جنرل سکریٹری کو صرف ہائی کمان معطل کرسکتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ فرید الدین کے ساتھ پارٹی میں ناانصافی ہوئی ہے، جس کی ہم سخت مذمت کرتے ہیں اور صدر تلنگانہ پردیش کانگریس پنالہ لکشمیا سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ مسٹر فرید الدین کی معطلی کو اندرون تین یوم برخاست کردیں، ورنہ دہلی پہنچ کر پارٹی صدر سونیا گاندھی سے ان کی شکایت کی جائے گی۔ دریں اثناء رضا حسین آزاد نے پارٹی کے سینئر اور مخلص قائد محمد فرید الدین کی معطلی کے واقعہ کو بدبختانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ پارٹی میں مسلمانوں کو برداشت نہیں کیا جا رہا ہے اور بغیر وجہ نمائی نوٹس کے انھیں معطل کیا گیا، جس کی ہم سخت مذمت کرتے ہیں۔ انھوں نے کہاکہ پارٹی میں نہ تو مسلمانوں کو ٹکٹ دیا جا رہا ہے اور نہ ہی عہدے دیئے جا رہے ہیں۔ علاوہ ازیں جو لوگ پارٹی میں ہیں، انھیں پارٹی سے دور کیا جا رہا ہے، جس سے کانگریس کے تعلق سے مسلمانوں میں غلط فہمی پیدا ہو رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ صدر پردیش کانگریس، محمد فرید الدین کی معطلی کو فوراً برخاست کریں، ورنہ کانگریس کے مسلم قائدین اپنا علحدہ اجلاس طلب کرکے مستقبل کی حکمت عملی تیار کریں گے۔ اسی دوران نائب صدر گریٹر حیدرآباد کانگریس قادر شریف نے کہا کہ محمد فرید الدین پر بے بنیاد الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ انھوں نے 2014ء کے عام انتخابات میں کانگریس کے لئے کام کیا ہے اور حلقہ اسمبلی محبوب نگر میں کانگریس امیدوار عبید اللہ کوتوال اور حلقہ اسمبلی عنبر پیٹ کے کانگریس امیدوار وی ہنمنت راؤ کے حق میں انتخابی مہم چلائی، اس کے باوجود ان پر جھوٹے الزامات عائد کرکے انھیں معطل کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT