Saturday , December 15 2018

محنت و جستجو اور دُعاؤں سے زندگیاں بدل جاتی ہیں

محبوب نگر میں گرمائی کورسیس کی اختتامی تقریب، جناب ظہیرالدین علی خاں اور دیگر کا خطاب

محبوب نگر میں گرمائی کورسیس کی اختتامی تقریب، جناب ظہیرالدین علی خاں اور دیگر کا خطاب

محبوب نگر ۔ 5 جون (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) تعلیم کے بغیر خوشحال مستقبل کا تصور ممکن ہی نہیں ہے، تعلیم حاصل کرتے ہوئے آج دُنیا کے کسی بھی خطے میں باعزت زندگی گزاری جاسکتی ہے۔ اِن خیالات کا اظہار جناب ظہیرالدین علی خاں مینیجنگ ایڈیٹر روزنامہ سیاست نے مستقر محبوب نگر کے رینبو کانسیپٹ اسکول میں طالبات کی ایک کثیر تعداد کو مخاطب کرتے ہوئے کیا۔ یہ پروگرام مسلم شعور بیداری کمیٹی اور روزنامہ سیاست کے اشتراک سے مفت گرمائی کورسیس کی اختتامی تقریب کے موقع پر منعقد کیا گیا تھا۔ مینیجنگ ایڈیٹر سیاست نے کہا کہ طالبات، تعلیمی میدان میں برملا اپنی خواہشات کا اور اپنے عزائم کا اظہار کریں اور اپنے عزائم کو حاصل کرنے کے لئے ایک منزل مقرر کرلیں اور منزل کے حصول کیلئے سخت محنت ، لگن جستجو کے ساتھ آگے بڑھیں اور اللہ رب العزت کے حضور گڑگڑاکر دُعا مانگیں۔ آپ کی محنت بھی رائیگاں نہ ہوگی۔ آپ کی دعا بھی قبول ہوگی اور آپ اپنی منزل کو چھوسکیں گے۔ محنت اور دعا سے زندگیاں بدل سکتی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ آج زیادہ تر خاندانوں کا رجحان صرف ڈاکٹرس اور انجینئرس بننے تک ہی محدود ہے، حالانکہ مختلف شعبوں میں زبردست آمدنی کے کئی مواقع موجود ہیں۔ جناب ظہیرالدین علی خاں نے بڑے مشفقانہ انداز میں طالبات کو مشورہ دیا کہ وہ دیگر زبانوں کے ساتھ ساتھ انگریزی کی تعلیم لازمی طور پر حاصل کریں کیونکہ یہ ایک ایسی زبان ہے جس کو سیکھ کر دنیا میں کہیں بھی روزگار حاصل کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے مقامی قائدین اور ایم ایس بی کے ذمہ داران کو پیشکش کی کہ وہ انگریزی تعلیم حاصل کرنے کے خواہشمندوں کیلئے ہر ہفتہ ماہرین انگلش کو ادارۂ سیاست کی جانب سے محبوب نگر روانہ کرنے تیار ہیں۔ ان کی اس پیشکش کا طالبات اور شہ نشین پر موجود معززین نے تالیوں کی گونج میں خیرمقدم کیا۔ جناب جیلانی پیراک نے بحیثیت مہمان خصوصی مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ طالبات سب سے پہلے احساس کمتری کے خول سے باہر نکلیں اور اپنے اطراف کی زبانوں پر عبور حاصل کریں۔ انہوں نے کہا کہ کسی زمانے میں ڈگریوں کا حاصل کرنا بڑا مشکل کام تھا لیکن آج اپنی صلاحیتوں کے لحاظ سے ڈگریاں بہ آسانی حاصل کرسکتے ہیں۔ انہوں نے ادارۂ سیاست کی خدمات کو زبردست خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ اخبار ’’سیاست‘‘ صرف ایک اخبار ہی نہیں بلکہ یہ ایک ہمہ مقصدی ادارہ ہے

جو آج قوم و ملت کو تعلیم اور فن سے آراستہ کرنے کے لئے شب و روز مصروف ہے۔ ایم ایس بی کے روح رواں ڈاکٹر مدھوسدن ریڈی نے جو فرطِ مسرت سے سرشار تھے، کہا کہ آج تربیت یافتہ طالبات کی تعداد کو دیکھ کر وہ مسرت محسوس کررہے ہیں۔ انہوں نے طالبات سے سوالات کئے کہ وہ اب کیا کرنا چاہتی ہیں اور روزگار کے حصول کیلئے کیا منصوبہ رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ طالبات کو سنٹرس کے قیام کیلئے امداد کی فراہمی حکومت کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے اس موقع پر اعلان کیا کہ 22 جون کو صبح 10 بجے اسی مقام پر ایک مشاورتی اجلاس منعقد کیا جائے گا جس میں تکمیل شدہ طالبات کو روزگار کیلئے قرضوں کی فراہمی کے ضمن میں رہنمائی کی جائے گی اور مائناریٹی فینانس کارپوریشن سے 50% سبسڈی والے قرض کیلئے رہنمائی کی جائے گی اور ایس ایس سی کے بعد طالبات کی آئندہ تعلیم کیلئے بھی مشورے دیئے جائیں گے۔ جناب غلام غوث ڈائریکٹر اے پی ایم ایف سی نے بھی طالبات کو مشورہ دیا کہ وہ سیکھے ہوئے فن کو آمدنی کا ذریعہ بنائیں جس کیلئے ان کی بھرپور رہنمائی کی جائے گی۔ صدر ایم ایس بی جناب سید اسمعیل نے ایم ایس بی کا تفصیلی تعارف کرایا اور بتایا کہ اس کیمپ میں جملہ 900 طالبات شریک تھیں اور پوری توجہ کے ساتھ انہوں نے تربیت حاصل کی۔

انہوں نے جناب ظہیرالدین علی خاں کا شکریہ ادا کیا کہ تجربہ کار اِنسٹرکٹرس کو انہوں نے ایک مہینہ سے زیادہ وقت تک کیلئے یہاں قیام کرواتے ہوئے ہزاروں طلبہ کو ہنرمند بنانے میں اہم کردار ادا کیا۔ اس موقع پر تربیت کے دوران تیار کردہ اشیاء کا مینیجنگ ایڈیٹر سیاست اور دیگر مہمانوں نے مشاہدہ کیا اور مینیجنگ ایڈیٹر نے ستائش کرتے ہوئے کہا کہ طالبات کے تیار کردہ اس گلدستہ کو وہ اپنے گھر لے جائیں گے۔ اس موقع پر کرو مورتی سی پی ایم، عبدالجبار سی پی ایم، محمد تقی حسین تقی، محسن خاں ، مرزا قدوس بیگ نے بھی مخاطب کیا۔ اس موقع پر بیکم جناردھن کو کنوینر ٹی آر ایس نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ مقامی ایم ایل اے سرینواس گوڑ جو پروگرام میں شرکت کرنے والے تھے، اچانک حیدرآباد روانہ ہوئے۔ انہوں نے آج کے پروگرام کے لئے اپنا پیام روانہ کیا ہے کہ وہ حکومت کی جانب سے ایم ایس بی کے فلاحی کاموں کے لئے اپنا تعاون پیش کریں گے اور اپنی نیک تمناؤں کا اظہار بھی کیا۔ میر شعیب علی صدر منہاج القرآن نے اظہار تشکر کیا اور محمد مظہر نے کارروائی چلائی۔ اس موقع پر بہتر مظاہرہ کرنے والی طالبات کو مہمانوں کے ہاتھوں مومنٹوز اور سرٹیفکیٹس تقسیم کئے گئے جبکہ مہمانانِ خصوصی اور پروگرام کے دوران خدمات پیش کرنے والے نوجوانوں کو بھی مومنٹوز دیئے گئے۔

TOPPOPULARRECENT