Tuesday , September 25 2018
Home / اضلاع کی خبریں / محکمہ ہائوزنگ ضلع نظام آباد میں دھاندلیوں کی تحقیقات

محکمہ ہائوزنگ ضلع نظام آباد میں دھاندلیوں کی تحقیقات

نظام آباد ۔ 11 اگست ۔ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ضلع نظام آباد میں محکمہ ہائوزنگ میں ہوئے دھاندلیوں کی تحقیقات کیلئے سی بی سی آئی ڈی کے انسپکٹر وینکٹیشور رائو ضلع نظام آباد میں ہوئی دھاندلیوں کی تحقیقات یلاریڈی حلقہ سے آغاز کررہے ہیں۔ چیف منسٹر مسٹر چندر شیکھر رائو نے کانگریس کے10سالہ دور میں ہوئی دھاندلیوں کی تحقیقات کیلئے سی بی سی

نظام آباد ۔ 11 اگست ۔ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ضلع نظام آباد میں محکمہ ہائوزنگ میں ہوئے دھاندلیوں کی تحقیقات کیلئے سی بی سی آئی ڈی کے انسپکٹر وینکٹیشور رائو ضلع نظام آباد میں ہوئی دھاندلیوں کی تحقیقات یلاریڈی حلقہ سے آغاز کررہے ہیں۔ چیف منسٹر مسٹر چندر شیکھر رائو نے کانگریس کے10سالہ دور میں ہوئی دھاندلیوں کی تحقیقات کیلئے سی بی سی آئی ڈی کو ہدایت دینے پر سی بی سی آئی ڈی کے عہدیداروں نے وینکٹیشور رائو کو نظام آباد ضلع کے مختص کیا ہے ۔ ضلع نظام آباد میں 2007-08 سال کے دوران کروڑہا روپئے کی دھاندلی ہوئی ہے 2007 ء میں اندراماں ہائوزنگ کے بلوں کی ادائیگی بی او کے ذریعہ ہوئی تھی اور دیڑھ سال تک یہ سلسلہ جاری تھا اور ان دیڑھ سالوں میں کروڑہا روپئے کی دھاندلی ہوئی ہے ۔ منتخب سیاسی نمائندے ان عہدیداروں پر دبائو ڈالتے ہوئے اپنی من مانی کرتے ہوئے بلوں کی ادائیگی کی گئی ۔ تقریباً 4کروڑ روپئے کی دھاندلی ہونے کی شکایت عام ہے ۔ سی بی سی آئی ڈی کے عہدیدار بودھن، لنگم پیٹ، منڈلوں کے تفصیلات محکمہ ہائوزنگ کے عہدیداروں سے حاصل کی ہے ۔ قبل ازیں تین دن تک تحقیقات کے بعد کتہ پلی موضع میں ہوئی دھاندلیوں پر ہائوزنگ کے ڈی ای اور تین اے ای او کو معطل کیا گیا تھا مزید عہدیداروں کیخلاف کارروائی کرنے کے امکانات ہیں ۔ ضلع نظام آباد کے 36 منڈلوں کے 718 گرام پنچایت میں مختلف اسکیمات کے تحت ایک لاکھ 28 ہزار امکنہ جات کی تعمیر عمل میں لائی گئی ہے اور مزید 29 ہزار مکانات مختلف مرحلوں میں زیر تعمیر ہے اور 84 ہزار مکانات ادھورے ہیں۔31؍ ڈسمبر 2013 ء تک ویجلنس کی جانب سے کی گئی تحقیقات20 منڈلوں کے 29 دیہاتوں میں کی گئی۔ دوسرے مرحلہ میں کی گئی تحقیقات میں 4کروڑ 86لاکھ روپیوں کی دھاندلی ہونے کی ویجلنس عہدیداروں کی جانب سے پیش کی گئی تھی ۔ بودھن منڈل کے اوٹ پلی میں ایک روز63لاکھ روپئے کی دھاندلی ہونے کا انکشاف کیا گیا ہے ۔ تیسرے مرحلہ میں ویجلنس کی جانب سے کی گئی تحقیقات میں 2کروڑ روپئے تک کی دھاندلی ہونے کا انکشاف کیا گیا ہے ۔ ضلع میں جملہ 6کروڑ 86لاکھ روپئے کی دھاندلی ہونے کا ویجلنس کی جانب سے انکشاف کیا گیا ہے ۔مستحق افراد کو امکنہ جات کی منظوری میں کئی دھاندلیاں کی گئی ہے صرف 20 فیصد افراد کو ہی اس سے استفادہ ہوا ہے جبکہ 80 فیصد غیر مستحق افراد کو فائدہ پہنچا ہے ان تحقیقات کے بعد اب تک 55لاکھ 19 ہزار روپئے ریکور کیا گیا ہے اورمحکمہ ہائوزنگ کے 34 عہدیدار اس میں ملوث ہونے کا ویجلنس کی جانب سے دی گئی رپورٹ پران پر مقدمہ درج کیا گیا تھا اور 6افراد کو معطل کیا گیا تھا۔ ضلع نظام آباد نظام ساگر، کمر پلی، سداشیو نگر، کوٹگیر ، ماکلور، ورنی، لنگم پیٹ، ایڑپلی، ڈچپلی، نوی پیٹ، بانسواڑہ، رنجل، گندھاری، ناگی ریڈی پیٹ، درپلی، بالکنڈہ، نظام آباد، بودھن، تاڑوائی منڈلوں میں تحقیقات کرتے ہوئے 34 عہدیدار ملوث ہونے کی رپورٹ پیش کی گئی اور باقی عہدیداروں کے بارے میں کوئی رپورٹ نہیں دی گئی ۔ سی آئی ڈی کی تحقیقات کے بعد مزید عہدیداروں کیخلاف کارروائی کئے جانے کے امکانات بھی ہیں اور کئی دھاندلیاں منظر عام پر آنے کے امکانات ظاہر ہورہے ہیں۔ سی آئی ڈی کی جانب سے تحقیقات کے آغاز کے بعد عہدیداروں میں خوف کی لہر پیدا ہوگئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT