Friday , April 20 2018
Home / شہر کی خبریں / مرکزی بجٹ سے تلگودیشم میں شدید ناراضگی

مرکزی بجٹ سے تلگودیشم میں شدید ناراضگی

بی جے پی سے اتحاد ختم کرنے پر فی الحال کوئی فیصلہ نہیں
امراوتی 2 فبروری ( پی ٹی آئی ) جنوب میں بی جے پی کی سب سے بڑی حلیف تلگودیشم پارٹی اس بات پر مایوس ہے کہ وزیر فینانس ارون جیٹلی کے بجٹ میں ریاست کی ضروریات کا خیال نہیں رکھا گیا ہے تاہم پارٹی فی الحال اتحاد ختم نہیں کریگی ۔ تلگودیشم کے ذرائع نے یہ بات بتائی ۔ چیف منسٹر آندھرا پردیش این چندرا بابو نائیڈو نے پارٹی کی رابطہ کمیٹی کا آج ایک اجلاس منعقد کیا جس میں بجٹ پر ان کی ناراضگی کے اشارے ملے ۔ اجلاس میں نریندر مودی حکومت کی جانب سے آندھرا پردیش سے روا رکھے گئے سلوک پر ہی زیادہ غور و خوض کیا گیا اور کہا گیا کہ بجٹ تجاویز میں ریاست سے ناانصافی کی گئی ہے ۔ ذرائع نے بتایا کہ تلگودیشم قائدین میں یہ شدید احساس ہے کہ بی جے پی سے اتحاد ختم کرنا چاہئے ۔ حالانکہ یہ رسمی طور پر کوئی اطلاع نہیں ہے کہ اجلاس میں کیا بات چیت ہوئی تاہم کچھ سینئر تلگودیشم قائدین نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ تقریبا ہر کسی نے جن میں ضلع یونٹ سربراہان بھی شامل تھے اس خیال کا اظہار کیا کہ بجٹ میں ریاست کو نظر انداز کردئے جانے کے بعد تلگودیشم کو بی جے پی سے اتحاد ختم کرلینا چاہئے ۔ ذرائع نے کہا کہ نائیڈو نے پارٹی کے سینئر قائدین کو ترغیب دی کہ وہ بی جے پی سے اتحاد کے مسئلہ پر کوئی اظہار خیال نہ کریں ۔ انہوں نے راجستھان ضمنی انتخابی نتائج پر بھی تبصرہ نہ کرنے قائدین کو مشورہ دیا جہاں بی جے پی کو کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔ ذرائع کے بموجب خود نائیڈو نے مرکزی بجٹ پر شدید ناراضگی ظاہر کی اور سوال کیا کہ مرکز نے کیوں ریاست کو نظر انداز کیا ہے ؟ ۔

TOPPOPULARRECENT