Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / مرکزی حکومت کی ناکام پالیسیوں سے امریکہ میں ہندوستانی طلباء پریشان

مرکزی حکومت کی ناکام پالیسیوں سے امریکہ میں ہندوستانی طلباء پریشان

حیدرآباد ۔ 12 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز) : قومی سی پی آئی سکریٹری ڈاکٹر کے نارائنا نے الزام عائد کیا کہ محض عہدیداروں کے امتیازی برتاؤ ، اور مرکزی حکومت کی ناکام پالیسیوں کی وجہ سے آج بیرونی ممالک بالخصوص امریکہ کو تعلیم کے حصول کے لیے روانہ ہونے والے طلباء مشکلات و مسائل سے دوچار ہورہے ہیں ۔ آج یہاں بیگم پیٹ میں واقع امریکی قونصلیٹ دفتر کے روبرو اے آئی ایس ایف ( آل انڈیا اسٹوڈنٹس فیڈریشن ) کے زیر اہتمام منظم کردہ احتجاجی دھرنا پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر کے نارائنا نے سخت انتباہ دیا کہ طلباء کے ساتھ کئے جانے والے امتیازی برتاؤ کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ اگر امریکہ میں فرضی و نقلی یونیورسٹیاں پائی جائیں تو ان یونیورسٹیوں میں داخلے حاصل کر کے اپنے مقام سے امریکہ پہونچنے والے طلباء کو بہتر و نامور یونیورسٹیوں میں ان طلباء کے داخلوں کو یقینی بنانے کی ذمہ داری بھی امریکہ پر ہی عائد ہوگی ۔ ڈاکٹر نارائنا نے ایسے طلباء جنہیں امریکہ روانہ ہونے پر ایرپورٹ پر ہی روک لیا گیا بعد ازاں انہیں مبینہ طور پر اذیتیں دے کر واپس کردیا گیا ۔ ان تمام طلباء کو کم از کم ایک کروڑ روپئے معاوضہ فراہم کرنے کا مرکزی حکومت اور امریکی حکومت سے مطالبہ کیا ۔ احتجاج میں شامل تمام طلباء بشمول ڈاکٹر کے نارائنا سکریٹری قومی سی پی آئی ، سی ایچ وینکٹ ریڈی ، سکریٹری ریاستی سی پی آئی تلنگانہ ودیگر قائدین وغیرہ کو پولیس نے فوری طور پر حراست میں لے لیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT