Sunday , October 21 2018
Home / شہر کی خبریں / مرکزی حکومت کے خلاف عدم اعتماد پیش کرنے کا فیصلہ

مرکزی حکومت کے خلاف عدم اعتماد پیش کرنے کا فیصلہ

اے پی کو خصوصی موقف دلانے تلگودیشم سے تعاون کیلئے جگن کی خواہش
امراوتی ۔ 18 فبروری ( پی ٹی آئی) وائی ایس آر کانگریس کے صدر وائی ایس ایس جگن موہن ریڈی نے آج کہا کہ آندھراپردیش کو خصوصی موقف دینے کے مطالبہ پر ان کی پارٹی مرکز کی این ڈی اے حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کرنے تیار ہے بشرطیکہ تلگودیشم اور دیگر جماعتوں کی طرف سے اس کی تائید کی جائے۔ جگن موہن ریڈی نے کہا کہ ’’ لوک سبھا میں (حکومت کے خلاف) تحریک عدم اعتماد کی پیش کردہ کیلئے کم سے کم 54 ارکان پارلیمنٹ کی دستخط درکار ہوتی ہے ۔ ہمارے پاس صرف پانچ ارکان ہیں ۔ تلگودیشم اگر تحریک عدم اعتماد کرتی ہے تو وائی ایس آر کانگریس اس کی تائید کرے گی ‘‘ ۔ جگن موہن ریڈی ریاست گیر پرجاسنکلپ پدیاترا کے طور پر ضلع پرکاشم کے علاوکندوکور میں آمدکے بعد جلسہ عام کے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے مزید کہاکہ چیف منسٹر چندربابونائیڈو کے حلیف (جنا سینا کے صدر) پون کلیان نے بھی تلگودیشم سے اے پی کے لئے خصوصی موقف کے مطالبہ کے ساتھ مرکز کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کے لئے کہا ۔ انہوں نے کہا کہ ’’تلگودیشم اگر ایسا نہیں کرتی تو مارچ کے آخری ہفتہ میں ہم یہ تحریک پیش کریں گے ‘‘ تاہم جگن نے یہ نہیں بتایا کہ آیا کس طرح وہ ارکان کی درکار تعداد میں تائید حاصل کریں گے ۔ جگن نے قبل ازیں اعلان کیا تھا کہ مرکز کی طرف آندھراپردیش کو خصوصی موقف دینے کا مطالبہ قبول نہ کئے جانے کی صورت میں وائی ایس آر کانگریس کے ارکان پارلیمنٹ 8 اپریل کو ایوان کی رکنیت سے مستعفی ہوجائیں گے ۔ ریڈی چاہتے ہیں کہ مرکز پر دباو میں شدت پیدا کرنے کے لئے اس ریاست سے تعلق رکھنے والے تلگودیشم اور بی جے پی کے ارکان بھی مستعفی ہوجائیں ۔ جگن نے کہا کہ ’’ خصوصی معاشی پیکیج کے نام پر ریاست کو دھوکہ نہ دیجئے ۔ ہمارے (آندھراپردیش کے ) تمام 25 ارکان پارلیمنٹ اپنی ریاست کے خصوصی موقف کے حصول کے لئے مستعفی ہوجائیں گے ۔

TOPPOPULARRECENT