Thursday , December 13 2018

مسئلہ تلنگانہ پر کانگریس سیاسی کھیل میں مصروف

نئی دہلی4 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) تلگودیشم پارٹی کے لیڈر این چندرابابو نائیڈو نے جو تلنگانہ اور سیما آندھرا علاقوں کے عوام کیلئے ’مساویانہ انصاف‘ کیلئے اصرار کے ساتھ دہلی کے دورہ پر پہونچے ہیں، کانگریس پر الزام عائد کیاکہ وہ آندھراپردیش کی تقسیم کے مسئلہ پر محض معمولی فائدے کیلئے سیاسی کھلواڑ کررہی ہے۔ بی جے پی کے سینئر لیڈر ایل

نئی دہلی4 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) تلگودیشم پارٹی کے لیڈر این چندرابابو نائیڈو نے جو تلنگانہ اور سیما آندھرا علاقوں کے عوام کیلئے ’مساویانہ انصاف‘ کیلئے اصرار کے ساتھ دہلی کے دورہ پر پہونچے ہیں، کانگریس پر الزام عائد کیاکہ وہ آندھراپردیش کی تقسیم کے مسئلہ پر محض معمولی فائدے کیلئے سیاسی کھلواڑ کررہی ہے۔ بی جے پی کے سینئر لیڈر ایل کے اڈوانی سے آج یہاں اُن کی رہائش گاہ پر ملاقات کے بعد اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ ’’کانگریس چاہتی ہے کہ چند مسائل پیدا کرتے ہوئے اُس کا سیاسی فائدہ اُٹھایا جائے۔ یہ اُن کا حربہ ہے چنانچہ میں کانگریس پارٹی کے اِس رویہ کی مذمت کرتا ہوں‘‘۔ نائیڈو نے کہاکہ یہ اُن کی ذمہ داری ہے کہ قومی قائدین سے ملاقات کرتے ہوئے اُنھیں اِس بات سے باخبر کیا جائے کہ آندھراپردیش میں کیا ہورہا ہے اور ریاست کی تقسیم کے پس پردہ کانگریس کے محرکات کیا ہیں۔

اُنھوں نے کہاکہ ’’دونوں علاقوں کے ساتھ مساویانہ انصاف کیا جانا چاہئے۔ اِس مسئلہ کا خوشگوار و دوستانہ حل تلاش کیا جانا چاہئے لیکن کانگریس اِس مسئلہ کو مزید پیچیدہ بنارہی ہے‘‘۔ چندرابابو نائیڈو نے دعویٰ کیاکہ کانگریس پارٹی صرف انتخابات میں نشستیں جیتنے سے دلچسپی رکھتی ہے۔ سابق چیف منسٹر نائیڈو نے مزید کہاکہ ’’یہ تمام واقعات ہیں جو میں اُن (اڈوانی) سے بیان کرچکا ہوں اور سب کا بھی یہی نظریہ ہے‘‘۔ چندرابابو نائیڈو نے آندھراپردیش کے چیف منسٹر این کرن کمار ریڈی کو چیلنج کیاکہ وہ اپنی ریاست کی تقسیم کے خلاف کانگریس پارٹی کی صدر سونیا گاندھی کی رہائش گاہ کے روبرو احتجاجی دھرنا منظم کر دکھائیں۔ چندرابابو نائیڈو نے کہاکہ ’’چیف منسٹر دہلی آرہے ہیں، اب وہ کل سے اندرا گاندھی کی سمادھی پر برت رکھیں گے، اِس کے ساتھ ہی وہ راجیہ سبھا انتخابات میں کانگریس امیدواروں کی تائید بھی کررہے ہیں۔ ایک طرف وہ سونیا گاندھی کی ستائش کررہے ہیں اور دوسری طرف ریاست کی تقسیم کے خلاف جدوجہد بھی کررہے ہیں۔ تاریخ میں ایسا کبھی نہیں ہوا ہے۔ تلگودیشم پارٹی کے سربراہ نے اِس مسئلہ پر مختلف سیاسی جماعتوں سے تائید کی درخواست کرتے ہوئے بی جے پی کے صدر راج ناتھ سنگھ کے بشمول دیگر کئی قومی قائدین سے ملاقات کی اور اپنا موقف بیان کیا۔

TOPPOPULARRECENT