Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / مساج پارلروں کیخلاف کارروائی ، 12 مقامات پر دھاوے

مساج پارلروں کیخلاف کارروائی ، 12 مقامات پر دھاوے

تھائی لینڈ سے تعلق رکھنے والی 34 کم عمر لڑکیوں کے بشمول 65 کو چنگل سے آزاد کرلیا گیا
حیدرآباد ۔ /20 اگست (سیاست نیوز) سائبر آباد پولیس نے غیرقانونی طور پر چلائے جارہے اسپا اور مساج پارلرس پر کارروائی کرتے ہوئے کل رات دیر گئے 12 مقامات پر دھاوے کرتے ہوئے مساج کیلئے استعمال کی جانے والی 65 لڑکیوں بشمول تھائی لینڈ سے تعلق رکھنے والی 34 کم عمر لڑکیوں کو اس کاروبار کے چنگل سے رہا کرالیا ۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ پولیس کی خصوصی ٹیموں نے مادھاپور ، رائے درگم اور گچی باؤلی پولیس اسٹیشنس حدود میں 12 مساج اور اسپا سنٹر پر دھاوے کئے اور اس کی آڑ میں چلائے جارہے قحبہ گری کے اڈے کو بے نقاب کردیا ۔ مساج پارلر کے نام پر قحبہ گری کے کاروبار چلانے والے 34 سالہ داسری سدھارتا کو بھی گرفتار کرلیا گیا ہے ۔ پولیس ذرائع نے مزید بتایا کہ سدھارتا تھائی لینڈ کی ایک خاتون کی مدد سے وہ تھائی لینڈ سے لڑکیوں کو شہر منتقل کرتے ہوئے انہیں مختلف مساج اور اسپا سنٹر میں استعمال کررہا تھا ۔ پولیس نے بتایا کہ قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یہ مساج پارلر چلائے جارہے تھے اور مقامی جنس افراد کے مساج میں ملوث ہورہے تھے ۔ داسری سدھارتا جو ان مساج سنٹرس کا سرغنہ ہے اپنے ساتھیوں سرفراز علی ، ونئے ، اجئے اور دیگر کی مدد سے یہ کاروبار چلارہا تھا ۔ سائبرآباد کے پاش علاقوں مادھا پور کے علاوہ شہر کے علاقے جوبلی ہلز اور بنگلور میں بھی اسی قسم کے کاروبار میں ملوث ہے اور ہر ماہ اس کاروبار کے ذریعہ وہ 90 لاکھ روپئے کمارہا تھا ۔ پولیس کو سدھارتا کے سدو پارٹنرس وینکٹ ریڈی اور بالا سبرامنیم کی تلاش ہے ۔ سابق میں ٹاملناڈو کے چیمبور پولیس اسٹیشن میں بھی سدھارتا کے خلاف قحبہ گری کے کاروبار میں ملوث ہونے پر بھی اس کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا ۔ پولیس نے کل رات کئے گئے دھاوؤں میں مساج پارلرس کی آڑ میں چلائے جارہے جسم فروشی کے کاروبار سے متعلق کئی شواہد اکٹھا کئے ہیں جن میں شی ٹیم اور کلوز ٹیم نے اہم رول ادا کیا ۔ تھائی لینڈ سے شہر کو منتقل کی گئی لڑکیوں کو بنجارہ ہلز کے پاش اپارٹمنٹس میں رکھا گیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT