Wednesday , January 17 2018
Home / سیاسیات / مستقبل میں کانگریس۔ جے ڈی ( یو ) مفاہمت کے اشارے

مستقبل میں کانگریس۔ جے ڈی ( یو ) مفاہمت کے اشارے

راجیہ سبھا میں اے آئی سی سی جنرل سکریٹری شکیل احمد کی واپسی ممکن

راجیہ سبھا میں اے آئی سی سی جنرل سکریٹری شکیل احمد کی واپسی ممکن
نئی دہلی۔/6جون، ( سیاست ڈاٹ کام ) جے ڈی ( یو ) جنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ ہمارے لئے اب ’’ غیر کانگریسیت‘‘ مرچکی ہے جس سے یہ واضح اشارہ ملتا ہے کہ مستقبل قریب میں کانگریس اور جے ڈی ( یو ) میں سیاسی مفاہمت ہوسکتی ہے۔ یاد رہے کہ حالیہ لوک سبھا انتخابات میں دونوں پارٹیاں ملک میں چل رہی ’ مودی لہر ‘ کی نذر ہوگئی تھیں۔ ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ کانگریس اور جے ڈی ( یو ) میں دوسرے درجہ کے قائدین کے درمیان اجلاس بھی منعقد ہوئے جہاں مختلف امکانی فیصلوں پر تبادلہ خیال کیا گیا جن میں اے آئی سی سی جنرل سکریٹری شکیل احمد کو نتیش کمار کی پارٹی کے تعاون سے راجیہ سبھا میں دوبارہ لایا جائے۔ کے سی تیاگی نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ اب ہمارے لئے’ غیر کانگریسیت‘ کا تصور فوت ہوچکا ہے ۔ اس نظریئے کے ساتھ اپنی سیاسی سرگرمیوں کو جاری رکھنے سے کوئی فائدہ نہیں جبکہ کانگریس کا متعدد ریاستوں میں کوئی وجود ہی نہیں ہے۔

وہ دن گئے جب ’ غیر کانگریسیت‘ کا دور دورہ تھا اور اب موجودہ دور ہمارے لئے ’ غیر بی جے پی ازم ‘ کا ہے۔ ہم تمام ایسی پارٹیوں کے ساتھ کام کرنے تیار ہیں جو غیر بی جے پی ہیں جن میں کانگریس، بائیں بازو اور دیگر علاقائی پارٹیاں بھی شامل ہیں۔ یاد رہے کہ ایل جے پی صدر رام ولاس پاسوان ، بی جے پی جنرل سکریٹری راجیو پرتاپ روڈی اور رام کرپال یادو جو انتخابات سے قبل آر جے ڈی رکن تھے لیکن بعد ازاں بی جے پی میں شامل ہوگئے تھے۔ ان تینوں کے استعفی کے بعد راجیہ سبھا کی تین نشستیں مخلوعہ ہیں کیونکہ تینوں بھی لوک سبھا کیلئے منتخب ہوئے ہیں۔ پاسوان حاجی پور سے ، روڈی سرن سے اور یادو پاٹلی پتر سے لوک سبھا کیلئے منتخب ہوئے ہیں۔ چونکہ ایوان بالا کیلئے ضمنی انتخابات علیحدہ طور پر منعقد کئے جاتے ہیں لہذا یہ کہا جاسکتا ہے کہ بہار میں حکمراں جماعت جے ڈی ( یو ) تینوں نشستوں پر کامیابی حاصل کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT