Tuesday , December 12 2017
Home / Top Stories / مستقبل کو تابناک بنانے کے لیے قابلیت و مہارت ضروری

مستقبل کو تابناک بنانے کے لیے قابلیت و مہارت ضروری

سہولیات و مراعات سے استفادہ کرنے طلبہ سے خواہش ، ایمسیٹ امیدواروں کے پری کونسلنگ پروگرام سے جناب عامر علی خاں کا خطاب
حیدرآباد ۔ 4 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : طالب علم کو خود اعتمادی کے ساتھ آگے بڑھنا چاہئے اور آج جو سہولیات ، مراعات مہیا ہیں اس سے پورا استفادہ کرنا چاہئے ۔ انجینئر بنے تو اچھے انجینئر بنئیے ۔ آج 70 فیصد انجینئرس قابل روزگار نہیں لیکن آپ مابقی 30 فیصد میں اپنا مقام بنائیے ۔ ان خیالات کا اظہار جناب عامر علی خاں نیوز ایڈیٹر سیاست نے یہاں ایمسیٹ میناریٹی امیدواروں کی پری کونسلنگ کے کثیر اجتماع سے مخاطب کرتے ہوئے کیا ۔ جو رائل رایجنسی گارڈن آصف نگر پر رکھا گیا تھا انہوں نے سلسلہ تقریر جاری رکھتے ہوئے کہا کہ آج 4 فیصد تحفظات پر عمل آوری ہورہی ہے لیکن موجودہ تلنگانہ حکومت نے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کا وعدہ کیا اگر یہ 12 فیصد ہوجائے تو تعلیم اور روزگار میں ہمارا تناسب بہت بڑھ جاتا ہے ۔ ایمسیٹ کے ذریعہ جن اہم پروفیشنل کورسیس میں داخلے دئیے جاتے ہیں اس کے لیے کونسلنگ کے طریقہ کار سے واقف ہونا اور جن سرٹیفیکٹ کی ضرورت ہوتی ہے اس کی تیاری کرنے کے لیے یہ پروگرام بے حد ممد و معاون ثابت ہوگا ۔ جناب عامر علی خاں نیوز ایڈیٹر سیاست نے اس موقع پر طلباء کے ساتھ سرپرستوں پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ صحیح فیصلہ کریں اور مستقبل کو نہ صرف شاندار بنائیں بلکہ جس شعبہ کا بھی انتخاب کریں اس میں اعلیٰ مقام رہے ۔ مسلم نوجوان طبقہ میں ٹائلنٹ کی کمی نہیں انہوں نے کورٹلہ ضلع کریم نگر کے اردو میڈیم کے طالب علم محمد جنید کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ اس نے ایس ایس سی ٹاپ کرنے کے بعد انٹر کیا پھر انجینئرنگ کی تکمیل کی ۔ اب انفوسیس میں 50 ہزار روپئے پیاکیج پر برسر خدمت ہے ۔ اس سے سبق حاصل کرنا چاہئے ۔ ادارہ سیاست کے زیر اہتمام منعقدہ مقصدی کونسلنگ سیشن کے مہمان خصوصی جناب اکبر علی خاں سابق وائس چانسلر تلنگانہ یونیورسٹی نے ویب کونسلنگ کے طریقہ کار سے واقف کرواتے ہوئے صحیح خانہ پری پاس ورڈ کے صحیح استعمال اور ون ٹائم پاس ورڈ جو موبائل فون پر آتا ہے اس کا فوری استعمال کرنے کی ہدایات دی اور سرپرستوں کو بھی مشورہ دیا کہ وہ صحیح کالج اچھے کورس سے پہلے واقف ہو کر ویب آپشن کریں ۔ ملک میں مرکز کی انڈسٹریل پالیسی اور تلنگانہ کی آئی پاس انڈسٹریل پالیسی سے میکانیکل انجینئرنگ کی زبردست مانگ ہے ۔ نئی نسل کو کوالٹی اور اسمارٹ کے مخفف کے ساتھ اس پر عمل کرنے کا مشورہ دیا ۔ اگریکلچر یونیورسٹی کے ڈاکٹر عبدالرحمن نے بی ایس سی اگریکلچر میں انٹر یم پی سی ، بی پی سی امیدواروں کے کورس اور اس کے داخلے کے لیے ہونے والی کونسلنگ سے واقف کروایا ۔ پروفیسر سید اسماعیل نے کہا کہ وٹرنری سائنس اور ہارٹیکلچر سائنس کے کورس میں داخلے ایمسیٹ کے ذریعہ ہوتا ہے اور اس کے لیے یم پی سی اور بی پی سی کے جو اہمیت ہے اس سے واقف کروایا ۔ جناب خواجہ علی شعیب انجینئر نے بی ای / بی ٹیک کے چھ بڑے انجینئرنگ برانچس اور 26 چھوٹے برانچس سے واقف کرواتے ہوئے ایمسیٹ ( انجینئرنگ ) کی ویب کونسلنگ کے طریقہ کو تفصیل سے بتلایا اور انجینئرنگ کے طلبہ ایک سے زائد کالجس اور کورسیس کے لیے ویب آپشن دیں ۔ جناب منظور احمد کوآرڈینٹر پروگرام نے مسلم اقلیتی طلبہ کو گورنمنٹ اور نان میناریٹی کالجس میں 4 فیصد تحفظات کے ذریعہ داخلے کی اپیل کی ۔ کیرئیر کونسلر روزنامہ سیاست ایم اے حمید نے کونسلنگ کے متعلق تفصیلی روشنی ڈالتے ہوئے کونسلنگ کے طریقہ کار ، کتنے طرح کی کونسلنگ ہوتی ہے ۔ رینک ، تاریخ ، شیڈول اور ہیلپ لائن مراکز کے ساتھ اسنادات جو کونسلنگ کے ضروری ہے بتلایا ۔ اس موقع پر میناریٹی سرٹیفیکٹ کے نمونہ کاپی دی گئی ۔ جناب فیصل بن علی القیعطی پروپرائٹر رائل ریجنسی گارڈن نے انتظامی امور کی نگرانی کرتے ہوئے مکمل تعاون کیا ۔ عبدالرحمن کی قرات سے آغاز ہوا ۔ رجسٹریشن میں منہاج ، سیما ، مصور ، محمد معز ، تبسم نے انجام دئیے ۔ آخر میں ایم اے حمید نے شکریہ ادا کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT