Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / مسجد اقصیٰ میں دراندازی کی کوشش ،15 یہودی گرفتار

مسجد اقصیٰ میں دراندازی کی کوشش ،15 یہودی گرفتار

یروشلم ۔ 13 مئی (سیاست ڈاٹ کام) مقبوضہ بیت المقدس میں اسرائیلی پولیس نے دائیں بازو سے تعلق رکھنے والے پندرہ یہودیوں کو گرفتار کر لیا ہے۔وہ بلا اجازت مسجد اقصیٰ میں داخل ہونے کی منصوبہ بندی کررہے تھے۔ مسجد اقصیٰ مسلمانوں کا قبلہ اول اور ان کے لیے تیسرا مقدس مقام ہے۔یہود بھی اس کو ٹیمپل ماؤنٹ کی وجہ سے اپنے لیے مقدس خیال کرتے ہیں۔انھیں وہاں جانے کی تو اجازت ہے لیکن عبادت کرنے کی اجازت نہیں ہے۔وہ مسجد اقصیٰ کے احاطے میں داخل ہونے کے بعد عبادت کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔جب مسلمان انھیں روکتے ہیں تو پھر ان میں ہاتھا پائی ہوجاتی ہے۔
اسرائیلی پولیس کا کہنا ہے کہ جمعرات کو دائیں بازو سے تعلق رکھنے والے متعدد کارکنان مقبوضہ بیت المقدس کے وسط میں جمع ہوئَے تھے اور وہ مسجد اقصیٰ کی جانب جانے کی منصوبہ بندی کررہے تھے۔ پولیس نے انھیں منتشر ہونے کا حکم دیا لیکن انھوں نے یہ حکم ماننے سے انکار کردیا۔اس کے بعد ان میں سے پندرہ کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔پولیس کی مداخلت سے قبل ان یہودیوں نے فلسطینیوں کو تشدد کا نشانہ بھی بنایا تھا۔ پولیس کے بیان کے مطابق انھوں نے ایک انسانی زنجیر بنا لی تھی اور مقامی لوگوں کو مقبوضہ بیت المقدس کے قدیم حصے میں داخل ہونے سے روکنے کوشش کی اور ان کے خلاف تشدد کا ارتکاب کیا ہے۔ بیان میں مزید کوئی تفصیل نہیں بتائی گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT