Tuesday , November 21 2017
Home / جرائم و حادثات / مسجد عزیزیہ میں فتنہ پھیلانے کی کوشش ، 4 شرپسند گرفتار

مسجد عزیزیہ میں فتنہ پھیلانے کی کوشش ، 4 شرپسند گرفتار

مصلیوں کو گمراہ کرنے اور عقائد پر بحث کرتے ہوئے امام پر حملے کی کوشش ، مقدمہ درج
حیدرآباد ۔ 9 جنوری : ( سیاست نیوز )  شہر حیدرآباد میں سرگرم ایک اور فتنہ کا آج اس وقت انکشاف ہوا ۔ جب مسجد عزیزیہ ، ہمایوں نگر کے ذمہ داروں نے فتنہ پھیلانے والوں کو رنگے ہاتھوں پکڑلیا ۔ اس واقعہ کے بعد علاقہ میں کشیدگی پھیل گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے ہزاروں عاشقان رسولؐ مسجد عزیزیہ پر جمع ہوگئے ۔ تاہم مسجد کے امام اور کمیٹی کے ذمہ داروں نے ان شرپسند عناصر کو پولیس کے حوالے کردیا ۔ جس سے ایک بڑا سانحہ ٹل گیا ۔ قبل مسجد کے امام عماد الدین عمری نے شرپسندوں کی کونسلنگ کرنے کی کوشش کی اور انہیں خارجی فتنہ کو ترک کرنے کا مشورہ دیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ یہ شرپسند عناصر جو انجینئرنگ کے طالب علم بتائے گئے ہیں امام مسجد پر حملہ آور ہوگئے اور ان کی بات کو غلط قرار دینے انہیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دی گئیں اور امام و دیگر کو مسجد سے باہر آنے پر سنگین نتائج کا انتباہ دے رہے تھے ۔ امام سے اُلجھ پڑنے والے ان شرپسند عناصر کو مسجد میں موجودہ مصلیوں نے دیکھ لیا اور حالات کا جائزہ لے کر مسجد کمیٹی نے فوری انہیں پولیس کے حوالے کردیا ۔ پولیس نے مسجد کمیٹی کی شکایت پر مقدمہ درج کرتے ہوئے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے اور ان چار شرپسند فتنہ پھیلانے والے افراد کو حراست میں لے لیا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ تقریبا 15 تا 20 دن سے یہ شرپسند خارجی فرقہ کے عناصر مسجد عزیزیہ میں آرہے تھے ۔ اور اپنے ناپاک عزائم کو پھیلا رہے تھے ۔ ایک ایک نوجوان کو اپنی جعلسازی کا شکار بنا کر انہیں مرتد کرنے کی کوششوں میں یہ لوگ سرگرم تھے ۔ آج بعد نماز مغرب ایسی کوشش پر مسجد کے امام عماد الدین عمری کی نظر پڑی اور انہوں نے فوری ان کے ناپاک عزائم کو بھانپ لیا اور ان کی کونسلنگ کرنے کی کوشش اس دوران شرپسند عناصر امام پر حملہ آور ہوگئے ۔ اس خصوص میں اسسٹنٹ کمشنر پولیس آصف نگر ڈیویژن مسٹر محمد غوث محی الدین نے بتایا کہ شرپسندی کرنے والے چاروں افراد محمد شاہد شہزاد سہیل حجتہ الاسلام اور محمد انس کو گرفتارکرلیا گیا ہے ۔ جو مسجد میں بے چینی پھیلانے اور امام پر مبینہ حملہ کے مرتکب پائے گئے ۔ اے سی پی نے بتایا کہ ان شرپسندوں کے خلاف دفعات 506 ، 448 ، 295(A) اور 504 کے تحت مقدمات درج کرلیے گئے ہیں ۔ یہ شرپسند عناصر جھارکھنڈ کے ساکن شکیل بن حنیف نامی شخص کے حامی بتائے جاتے ہیں ، جو اپنے آپ کو حضرت عیسیؑ اور حضرت مہدی ؑ کے علاوہ جھوٹی نبوت کا دعویٰ کرتا ہے اور یہ شرپسند اس کے مشن پر سرگرم تھے ۔ جن کا تعلق ریاست بہار سے بتایا گیا ہے ۔ پولیس نے اس واقعہ کے بعد سخت چوکسی اختیار کرلی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT