Monday , November 20 2017
Home / عرب دنیا / مسجد نبوی ؐکے دفاع میں بینائی کھو دینے والا جاں باز سعودی سپاہی!

مسجد نبوی ؐکے دفاع میں بینائی کھو دینے والا جاں باز سعودی سپاہی!

جدہ ۔ 6 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کی سیکیورٹی فورسز نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بے بہا قربانیاں دی ہیں۔ دسیوں سپاہی دہشت گردی کے مقابلے میں جام شہادت نوش کرچکے ہیں جب کہ بڑی تعداد میں مختلف واقعات میں زخمی ہوئے۔ دہشت گردی کے نتیجے میں زخمی ہونے والے ایک سعودی سپاہی کی الگ المناک داستان ہے ۔رپورٹ کے مطابق ماہ صیام کے دوران افطار کے وقت مسجد نبوی کے قریب ایک داعشی دہشت گرد نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا جس کے نتیجے میں چار روزہ دار سپاہی شہید اور ایک زخمی ہوگیا۔ زخمی ہونے والے سپاہی 25 سالہ حسام بن صالح الصبحی کو جسم میں دیگر حصوں پر گہرے زخم آنے کے ساتھ ساتھ اس کی آنکھیں بھی ضائع ہوگئیں۔ یوں حسام نے اپنی آنکھیں اور بینائی روضہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی حفاظت میں قربان کردی۔علاج کے بعد حسام اب گھر تو واپس آگیا ہے مگر اس کی بینائی جا چکی ہے۔ اس نے بتایا کہ ماہ صیام کے آخری عشرے میں وہ چار دوسرے سپاہیوں ھانی الصبحی،عبدالمجید الحربی، محمد المولد اور عبدالرحمان الجھنی کے ہمراہ افطار کررہے تھے کہ اس دوران ایک اجنبی شخص ایک کارٹن اٹھائے ان کے قریب آیا اور ان سے مسجد نبوی کے بارے میں راستہ معلوم کیا۔ پہلے ان سب نے سمجھا کہ یہ متعمرین کو افطار کرانا چاہتا ہے۔ مگر جب اس نے پوچھا کہ مسجد نبوی کی طرف کون سا راستہ جاتا ہے تو انہیں شبہ ہوا کیونکہ وہ تو مسجد نبوی ؐہی کے قریب کھڑا تھا۔ اس سے قبل کی سیکیورٹی اہلکار اسے قابو کرتے دہشت گرد نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا جس کے نتیجے میں چار سپاہی موقع پر ہی شہید ہوگئے جب کہ حسام بن صالح شدید زخمی ہوا۔ اس مدینہ منورہ کے اسپتال میں لے جایا گیا۔ ابتدائی طبی امداد کے بعد اسے ریاض کے سیکیورٹی اسپتال منتقل کردیا گیا۔ حسام کئی ماہ تک اس اسپتال میں زیرعلاج رہا۔ مدینہ منورہ میں مسجد نبوی ؐکی سیکیورٹی پر تعیناتی سے قبل وہ مدینہ منورہ کے جنوب مغرب میں واقع مشہور تاریخی مقام بدر گورنری میں بھی خدمات انجام دے چکا ہے۔

ایران کیلئے جاسوسی، سعودی عرب
میں 15 افراد کو سزائے موت
دبئی، 6  دسمبر (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کی ایک عدالت نے آج 15 افراد کو سزائے موت سنائی ہے ، جنہیں ایران کیلئے جاسوسی کرنے کا قصوروار ٹھہرایا گیا ہے ۔ یہ اطلاع سعودی سرکاری ٹیلیویژن العربیہ کی رپورٹ میں دی گئی ہے ۔ ایران کیلئے جاسوسی کے الزامات کے تحت 2013 میں 32 افراد کو گرفتار کیا گیا تھا، جن میں 30 سعودی شیعہ تھے ، جبکہ ایک ایرانی اور ایک افغان شہری تھے ۔ ان کیخلاف گزشتہ فروری میں عدالتی کارروائی شروع کی گئی تھی۔ عدالت نے مذکورہ ملزمان میں سے 15 کو آج سزائے موت سنا دی ہے ، تاہم مابقی17 مشکوک ملزمان پر فیصلے کے بارے میں کوئی تفصیل نہیں بتائی گئی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT