Sunday , December 17 2017
Home / Top Stories / مسلمانوں پر امریکہ میں داخلے کی پابندی صرف ایک تجویز : ٹرمپ

مسلمانوں پر امریکہ میں داخلے کی پابندی صرف ایک تجویز : ٹرمپ

دنیا بھر میں شدت پسند اسلامی دہشت گردی کا سنگین مسئلہ، لندن میئر صادق خاں کو دورہ کی اجازت
واشنگٹن ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) امریکہ میں مسلمانوں کے داخلہ پر پابندی عائد کرنے اپنی تجویز کا اعادہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک ’’عارضی‘‘ عمل ہوگا۔ ری پبلکن کے نامزد صدارتی امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ نے آج کہا کہ یہ صرف ایک تجویز ہے جب تک مسئلہ پر غور نہیں ہوگا مسلمانوں پر پابندی کی تجویز کو عارضی سمجھا جائے۔ ٹرمپ نے مسلمانوں پر پابندی کیلئے اپنے موقف میں نرمی لاتے ہوئے کہا کہ ہم کو سنگین مسئلہ کا سامنا ہے۔ یہ ایک عارضی پابندی ہوگی۔ اس پابندی کو ابھی نافذ نہیں کیا گیا ہے اور کوئی بھی ایسا نہیں کرسکتا ہے۔ صرف یہ ایک تجویز ہے۔ یہ تجویز اس وقت تک برقرار رہے گی تاوقتیکہ ہم کو اس مسئلہ کا حل نہ مل جائے۔ ڈونالڈ ٹرمپ نے فاکس ریڈیو کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ ساری دنیا میں ہم کو انتہاء پسند اسلامی دہشت گردی کا سامنا ہے۔ لندن میئر صادق خاں کے بارے میں کہا کہ آپ پیرس جاسکتے ہیں۔ آپ سیان برنارڈینو جاسکتے ہیں۔ ساری دنیا میں گھوم پھر سکتے ہیں اگر ان کو داخلے سے روک دینے کا فیصلہ کیا گیا تو ان کو داخلہ نہیں دیا جاسکتا ہے۔ میں ان کے داخلے کو روکنا پسند نہیں کرتا۔ صادق خان جہاں چاہے جاسکتے ہیں۔

وہ خود بھی اپنے اور صدارت میں پاکستانی نژاد میئر صادق خاں کو امریکہ میں داخل ہونے کی پابندی سے استثنیٰ دوں گا جبکہ وہ صادق خاں کے شدید نقاد ہیں۔ بہرحال میں سمجھتا ہوں کہ اسلامی دہشت گردی کی موجودگی کی تردید کی جارہی ہے۔ ساری دنیا میں اس وقت اسلامی شدت پسندانہ دہشت گردی جاری ہے۔ یہ ایک تباہ کن مرحلہ ہے۔ لندن کے نومنتخب میئر صادق خاں کے بیان کے ردعمل میں ڈونالڈ ٹرمپ نے فاکس نیوز کو بتایا کہ صادق خاں کا یہ جذبہ غیر ضروری ہے کہ انہیں امریکہ میں داخلے کے حوالے سے خدشہ ظاہر کیا تھا کہ اگر ٹرمپ امریکہ کے صدر بن گئے تو وہ اپنے مسلمان عقیدے کی وجہ سے امریکہ کا سفر نہیں کرسکیں گے۔ اس سے قبل ٹرمپ نے کہا تھا کہ صادق خاں کو امریکہ میں داخلہ سے روکا نہیں جائے گا۔ تاہم صادق خاں نے ٹرمپ کی اس تجویز کو یہ کہتے ہوئے مسترد کردیا تھا کہ اسلام کے بارے میں کم علمی پر مبنی خیالات، ہم دونوں کے ممالک تک کم محفوظ بنا سکتے ہیں۔ ٹرمپ نے امریکی صدارتی انتخابات میں مہم کے دوران اپنی خارجہ پالیسی کو سخت بنانے کا اعلان کیا تھا اور بیرونی باشندوں کو امریکہ میں داخلہ لینے پر پابندی لگانے کی حمایت کی تھی۔

ٹرمپ اپنے گنجے پن کو کنگھی کے ذریعہ چھپا نہیں سکتے : نیراٹنڈن
واشنگٹن ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستانی نژاد امریکی نیراٹنڈن نے چہارشنبہ کو ڈیموکریٹک صدارتی امیدوار ہلاری کلنٹن کی انتخابی مہم کی قیادت کرتے ہوئے ری پبلکن امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ کی معاشی پالیسیوں کو زبردست تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ ایسی پالیسیوں سے امریکہ میں خواتین اور خاندانوں کے مستقبل کو خطرات لاحق ہوسکتے ہیں۔ نیراٹنڈن سنٹر فار امریکن پروگریس ایکشن فنڈ کی صدر ہیں۔ انہوں نے ٹرمپ کی جانب سے خواتین کی صحت پر غیرصحتمند تبصروں پر ناراضگی کا اظہار کیا اور کہا کہ اس طرح خواتین کی توہین کی جارہی ہے اور ساتھ ہی ساتھ معاشی سیکوریٹی کو بھی خطرات لاحق ہیں۔ نیراٹنڈن کے ساتھ اس وقت سینیٹر باربرا میکولسکی بھی موجود تھیں۔ نیراٹنڈن نے مسکراتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ اب اپنے معاشی منصوبہ میں موجود خامیوں کو چھپانے کی کوشش کررہے ہیں لیکن وہ یہ بھول گئے کہ خواتین کی نظریں بھی بڑی تیز ہوتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوئی گنجا اپنے گنجے پن کو کنگھی کے ذریعہ چھپانے کی کوشش کرے گا تو کیا پورا گنجا سر چھپ جائے گا؟

TOPPOPULARRECENT