Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات پر فوری اثر کے ساتھ عمل آوری کا مطالبہ

مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات پر فوری اثر کے ساتھ عمل آوری کا مطالبہ

حیدرآباد کلکٹوریٹ پر سی پی آئی ایم کا احتجاجی دھرنا ، ٹی ویرا بھدرم کا خطاب
حیدرآباد۔  17اگست(سیاست نیوز) تلنگانہ اسٹیٹ سکریٹری کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا مارکسسٹ تمنینی ویرا بھدرم نے ریاست میںمسلمانوں کو بارہ فیصد تحفظات فراہم کرتے ہوئے اپنے انتخابی وعدے کی تکمیل کا حکومت تلنگانہ سے پرزور مطالبہ کیا۔ آج یہاں حیدرآباد کلکٹریٹ دفتر میں سی پی آئی ایم کی جانب سے منعقدہ احتجاجی دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر ویرا بھدرم نے مسلم اقلیت کے لئے سب پلان پر عمل کرنے کا بھی مطالبہ کیا تاکہ مسلمانوں کی فلاح وبہبود کے لئے حکومت کی جانب سے جاری رقم اور اس کے خرچ کا مکمل حساب رکھا جاسکے اور مسلمانوں کی ترقی کے ذمہ دارمحکموںپر بھی لگام کسنے کاکام کیا جاسکے۔ اسٹیٹ سکریٹری سی پی آئی ایم نے رمضان کے موقع پر مساجد میںافطار کا اہتمام کرنے اور غیرمعیاری ملبوسات کی تقسیم عمل میں لانے سے ریاست کے مسلمانوں کی حالت زار میں کسی قسم کو ئی تبدیلی آنے والی نہیں ہے۔ انہوں نے شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ افطار اور ملبوسات کی تقسیم کے ذریعہ حکومت تلنگانہ مسلمانوں کے جذبات سے کھلواڑ کررہی ہے۔ مسٹر ویرا بھدرم نے مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کے لئے سروے کے نام پر قائم کردہ سدھیر کمیٹی کو بھی اپنی شدید تنقید کانشانہ بنایا اور کہاکہ سچرکمیٹی اور جسٹس رنگناتھ مشرا کمیشن کی رپورٹ کے باوجود سروے کے نام پر سدھیر کمیٹی کا قیام حکومت تلنگانہ کا افسوس ناک اقدام ہے جبکہ سدھیر کمیٹی کی سفارشا ت کی کوئی قانونی حیثیت بھی نہیں ہے۔انہوں نے تمام شعبہ حیات میں مسلمانوں کو بارہ فیصد تحفظات فراہم کرنے کا حکومت تلنگانہ سے مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ پسماندگی کاشکار طبقات کی فلاح وبہبود کے لئے نمائندگی اور احتجاج چیف منسٹر تلنگانہ کے چندرشیکھر رائو کو فضول دکھائی دے رہا ہے اور وہ بائیں بازو جماعتوں کی تحریکات پر برہم ہو کر بائیں بازو جماعتوں کو ناکارہ قرار دینے کی کوشش کررہے ہیں ۔ انہوں نے چیف منسٹر کے ریمارکس کو غیر جمہوری قراردیتے ہوئے کہاکہ اس قسم کے ریمارکس سے بائیں بازو جماعتیں خاص طور پر سی پی آئی ایم پسماندہ طبقات کی فلاح وبہبود کے لئے جاری اپنی جدوجہدکو ختم نہیںکریگی بلکہ ہم اپنی جدوجہد میںشدت پیدا کرتے ہوئے پسماندہ طبقات کو انصاف دلانے کاکام کریں گے۔ مسٹر ایم سرینواس نے مسلمانو ں کو تمام شعبہ حیات میںبارہ فیصد تحفظات اور مسلم سب پلان کے لئے تلنگانہ بھر میں چلائی گئی بس یاترا کا اس موقع پر ذکر کرتے ہوئے حکومت تلنگانہ سے ریاست کے مسلم میناریٹی کے ساتھ انصاف کا مطالبہ کیا۔ انہوںنے کہاکہ حکومت تلنگانہ اپنے انتخابی وعدوں کو چھوڑ کر غیرضروری پراجکٹوںکا اعلان کررہی ہے جس سے ریاست کی ترقی ممکن نہیں ہے۔ تنظیم آواز کے قائدین جناب ایم اے ستار‘ منہاج قریشی اور دیگر نے بھی اس احتجاجی دھرنے سے خطاب کیا۔ بعد ازاں سی پی آئی ایم کے قائدین نے کلکٹر حیدرآباد مسٹر راہل بوجا سے تحریری نمائندگی کرتے ہوئے ریاست تلنگانہ میںمسلمانوں کوبارہ فیصد تحفظات فراہم کرنے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT