Sunday , February 25 2018
Home / Top Stories / مسلمانوں کی اکثریت ایودھیا میں رام مندر کی مخالف نہیں

مسلمانوں کی اکثریت ایودھیا میں رام مندر کی مخالف نہیں

روی شنکر کا دعویٰ ، ایودھیا میں مختلف افراد سے ملاقاتیں ، ’’ ہر شخص جانتا ہے نتیجہ کیا نکلے گا ‘‘ :آدتیہ ناتھ

ایودھیا / لکھنؤ ۔ /16 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) آرٹ آف لیونگ کے بانی سری سری روی شنکر نے آج ایودھیا کا دورہ کرتے ہوئے مختلف افراد سے ملاقاتیں کیں اور دعویٰ کیا کہ انہیں دونوں فرقوں کی جانب سے کافی مثبت اشارے ملے ہیں ۔حالانکہ اس مقدمہ کے فریقین نے ان کی مصالحتی کوششوں کے بارے میں شبہات کا اظہار کیا ہے ۔ سری سری روی شنکر نے آج کہا کہ مسلمانوں کی اکثریت ایودھیا میں متنازعہ مقام پر جہاں کبھی بابری مسجد موجود تھی وہاں مندر بنانے کی مخالف نہیں ہے ۔ انہوں نے آج ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس مسئلہ کا حل پیش کرنے کیلئے یہاں نہیں آئے ہیں ۔ وہ چاہتے ہیں کہ لوگ ایک دوسرے کے قریب ہوں اور حل تلاش کریں ۔ اس معاملے میں انہیں دونوں فرقوں کی جانب سے انتہائی مثبت ردعمل ملا ہے ۔ وہ تمام سے اپیل کرتے ہیں کہ صبر و تحمل کا مظاہرہ کریں ۔ انہیں کچھ وقت دیں ۔ اگر دو یا تین ماہ کا قت دیا جائے اور دونوں طرف کے عوام کو اس پر غور و خوص کا موقع فراہم کیا جائے تو پھر مثبت نتائج برآمد ہوں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ہر قسم کے لوگوں سے ملاقات ایک مشکل کام ہے ۔ اور انہیں اس معاملے میں ہر ایک کے تعاون کی ضرورت ہے ۔ کئی فریقین نے سری سری روی شنکر کی جاری کوششوں کے بارے میں کہا ہے کہ خاطر خواہ مثبت نتائج کی توقع نہیں کی جاسکتی ۔ چیف منسٹر اترپردیش یوگی آدتیہ ناتھ نے بھی ان کی کوششوں کے بارے میں مثبت نتائج برآمد ہونے کی توقع ظاہر نہیں کی ۔ آدتیہ ناتھ سے روی شنکر کی کل ملاقات ہوئی تھی ۔ انہوں نے کہا کہ ہر شخص جانتا ہے کہ مذاکرات کا کیا نتیجہ برآمد ہوگا ۔ بالخصوص ایسے وقت جبکہ سپریم کورٹ اس معاملے کی /5 ڈسمبر سے یومیہ سماعت شروع کررہی ہے ۔

انہوں نے لکھنؤ میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ نے یومیہ سماعت شروع ہونے جارہی ہے اور ہر شخص سمجھ سکتا ہے کہ سری سری روی شنکر کی کوشش کیا نتیجہ برآمد کرے گی ۔ انہوں نے کہا کہ اگر اس تنازعہ کا حل ممکن ہوتا تو اب تک اس کی یکسوئی کرلی جاتی ۔ اس کے باوجود بھی اگر کوئی شخص بات چیت شروع کرے تو اس میں کوئی قباحت نہیں ۔ حکومت اس معاملے میں فریق نہیں ہے ۔ آدتیہ ناتھ نے کہا ہے کہ ایودھیا کے پہلے دورہ میں انہوں نے واضح طور پر کہا ہے کہ اگر دونوں فریق اس مسئلہ پر اتفاق رائے پیدا کرلیں تو حکومت غور کرسکتی ہے ۔ انہوں نے کہا تھا کہ حکومت اس معاملے میں پیشرفت نہیں کرسکتی کیونکہ یہ سپریم کورٹ میں زیردوراں ہے ۔ ہنومان گڑھی مندر کے پجاری مہنت گیان داس نے آج ایودھیا میں روی شنکر سے ملاقات سے انکار کرتے ہوئے ان پر الزام عائد کیا کہ وہ بات چیت کے نام پر عوام کو بے وقوف بنارہے ہیں ۔ ایک اور پجاری مہنت راجو داس نے دعویٰ کیا کہ ایسے وقت جبکہ ایودھیا مسئلہ کو عنقریب پرامن حل کرلیا جائے گا ، روی شنکر اس کا سہرا اپنے سر باندھنے کی کوشش کررہے ہیں ۔ وی ایچ پی کے سینئر لیڈر اور سپریم کورٹ میں ایودھیا مقدمہ لڑرہے تری لوکی ناتھ پانڈے نے روی شنکر پر الزام عائد کیا کہ وہ ان لوگوں سے ملاقات کررہے ہیں جو اس مقدمہ میں فریق بھی نہیں ہے ۔ ایک اور مقدمہ لڑرہے ہاشم انصاری مرحوم کے فرزند اقبال انصاری نے بھی روی شنکر کے دورہ کو سیاسی شعبدہ بازی قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا ۔ روی شنکر نے اس پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ بعض افراد ان کی کوششوں کی اس لئے مخالفت کررہے ہیں کیونکہ انہیں ایسی کوئی امید نہیں ہے کہ اس تنازعہ کو بات چیت کے ذریعہ حل کیا جاسکتا ہے ۔ اس کے برعکس ایسے کافی لوگ ہیں جو اس مسئلہ کے بات چیت کے ذریعہ پرامن حل پر یقین رکھتے ہیں ۔ روی شنکر نے آج نرموہی اکھاڑا کے مہنت دینندر داس سے ملاقات کے بعد میڈیا سے بات چیت کی ۔ انہوں نے فیض آباد میں مسلم دانشوروں کے گروپ سے بھی ملاقات کی ۔

TOPPOPULARRECENT