Monday , December 11 2017
Home / ہندوستان / مسلمانوں کے خلاف گاؤ رکھشکوں کے حملے

مسلمانوں کے خلاف گاؤ رکھشکوں کے حملے

وزیر اعظم سے موقف واضح کرنے ویلفیر پارٹی کا مطالبہ
نئی دہلی۔/11اگسٹ، ( سیاست ڈاٹ کام ) ویلفیر پارٹی آف انڈیا نے وزیر اعظم نریندر مودی کے اس بیان پر شدید ردعمل ظاہر کیا ہے کہ دلتوں کو مارنے کی بجائے انہیں گولی مار دی جائے اور کہا کہ یہ بیان تفرقہ پرست ذہنیت ظاہر کرتا ہے۔ پارٹی نے وزیر اعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ مسلمانوں کے خلاف گاؤ رکھشکوں کے حملوں پر اپنا موقف واضح کریں ، ملک کے مختلف مقامات پر دلتوں کے خلاف گاؤ رکھشکوں کے حملوں پر طویل خاموشی کے بعد وزیر اعظم نے حال ہی میں نقلی گاؤ رکھشکوں کو غیر سماجی عناصر قرار دیا اور طیش میں آکر کہا کہ دلتوں کو مار پیٹ کرنے کے بجائے مجھے ( مودی ) گولی ماردیں۔ ویلفیر پارٹی نے کہا کہ وزیر اعظم کے بیان میں سنجیدگی اور اخلاص کا فقدان پایا جاتا ہے کیونکہ مودی کو صرف دلتوں کی فکر ہے لیکن مسلمانوں کا ذکر تک گوارہ نہیں ہے جس کے باعث ان کی سنگھی ذہنیت آشکار ہوتی ہے۔ ویلفیر پارٹی کے جنرل سکریٹری پی سی حمزہ نے ایک بیان میں کہا کہ تحفظ گائے کے نام پر جب مسلمانوں پر حملے کئے جارہے تھے تو وزیر اعظم خاموش رہے لیکن دلتوں پر تشدد کیا گیا تو چیخ اُٹھے جو کہ وزیر اعظم کو زیب نہیں دیتا۔

TOPPOPULARRECENT