Monday , May 28 2018
Home / شہر کی خبریں / مسلمان اور مسائل کا انبار

مسلمان اور مسائل کا انبار

اب تو مسجد جانا بھی مشکل ہوگیا ، حلقہ چندرائن گٹہ کی رپورٹ
حیدرآباد۔7نومبر(سیاست نیوز) قدیم شہر حیدرآباد میںبلدی برقی او رآبرسانی عہدیداروں کی جانب سے ترقیاتی کاموں کا باضابطہ افتتاح تو عمل میںآتا ہے مگر اس کی تکمیل کے لئے سالوں گذر جاتے ہیں۔ شہر کے مختلف حصوں میں بڑی دھوم دھام کے ساتھ متعلقہ رکن اسمبلی ‘ رکن پارلیمنٹ اور کارپوریٹر عوام کے ہاتھوں گلپوشی کرالیتے ہیں اور سنگ بنیاد کی تختی لگاکر واپس چلے جاتے ہیں۔مگر ترقیاتی کاموں کے نام پر کی جانے والی کھدوائی‘ بڑے بڑے کھڈے مقامی عوام کے لئے درد سر بن جاتے ہیں۔ کاروبار متاثر ہوتا ہے مگر نہ تو عوامی نمائندے نیند سے بیدار ہوتے ہیں اور نہ ترقیاتی کاموں کو انجام دینے کے دعویدار حرکت میںآتے ہیں ۔ مہینوں‘ سالوں تک کام پائے تکمیل کو نہیں پہنچتا۔ ایسا ہی کچھ حال گنجان آبادی والے حافظ بابا نگر کا ہے جہاں پر پچھلے ایک سال سے نالے پر سلاب کی تعمیر کاکام کیاجارہا ہے ۔ بابا نگر کی مرکزی سڑک پر پچھلے ایک سال سے جاری اس کام کی وجہہ سے علاقے کے لوگوں کو نہ صرف مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے بلکہ اطراف واکناف کے لوگوں کا کاروبار بھی شدید متاثر ہے۔مقامی لوگوں کا کہناہے کہ پچھلے ایک سال سے یہاں نالے پر سلاب کی تعمیر کاکام کیاجارہا ہے ۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ نہایت سست رفتاری کے ساتھ کام کیاجارہا ہے ۔ نالے کے دونوں جانب تنگ راستہ ہے جس پر سے صرف ایک شخص چل سکتا ہے جبکہ اطراف واکناف میں بے شمار دوکانات اسکول اور مسجد بھی موجود ہے ۔ انتہاتو یہ ہے کہ مسجد کے باب الدخلہ کے قریب تک کھدوائی کردی گئی ہے جس کی وجہہ سے مسجد عثمان غنی ؓ حافظ بابا نگر کا راستہ تقریبا بند ہوگیا ہے ۔ مسجد کے معمر اور کم عمر مصلیوں کو اس کی وجہہ سے کافی دشواریاں پیش آرہی ہیں۔ اس کھدوائی کی وجہہ سے اسکول جانے والے بچوں کو اپنا راستہ بدلنا پڑرہا ہے ۔ رات کے اوقات میںنشیب فراز سے بھرے راستے پر گذرنا گویا موت کے کنویں میں چلنے کے مترادف ہے۔ متعلقہ ارباب مجاز او رعوامی نمائندوں پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ ایوانوں میں بلندبانگ دعوئوں کے بجائے متعلقہ عوام کو درپیش مشکلات کے حل کویقینی بنانے کاکام کریں۔۔

TOPPOPULARRECENT