Monday , December 11 2017
Home / Top Stories / مسلمان اپنے ووٹ ایس پی یا کانگریس کو دیکر ضائع نہ کریں

مسلمان اپنے ووٹ ایس پی یا کانگریس کو دیکر ضائع نہ کریں

مودی حکومت میں اقلیتوں کیساتھ امتیازی سلوک ، سرجیکل اسٹرائیک سے سیاسی فائدہ : مایاوتی

لکھنؤ۔ 9 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) مودی حکومت میں اقلیتوں کے ساتھ امتیازی رویہ اختیار کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے مسلمانوں کو سماج وادی پارٹی یا کانگریس کے حق میں ووٹ دینے کے خلاف خبردار کیا اور کہا کہ اس سے صرف بی جے پی کو فائدہ ہوگا۔ انہوں نے زعفرانی جماعت کو روکنے کیلئے مسلمانوں کی تائید کی اپیل کی۔ بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) بانی کانشی رام کی دسویں برسی کے موقع پر ریالی سے خطاب کرتے ہوئے مایاوتی نے کہا کہ مسلمانوں کو اپنا ووٹ ضائع نہیں کرنا چاہئے۔ سماج وادی پارٹی داخلی خلفشار کا شکار ہے اور کانگریس کا اترپردیش میں کوئی وجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ مرکز میں جب سے بی جے پی حکومت آئی ہے، مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا جارہا ہے۔ علیگڑھ مسلم یونیورسٹی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کا اقلیتی موقف چھینا جارہا ہے۔ فرقہ فرست طاقتیں مضبوط ہورہی ہیں اور لو جہاد، گاؤ رکھشا یا تبدیلی مذہب کے نام پر مسلمانوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ مایاوتی نے مودی حکومت پر شدید نکتہ چینی کی۔ انہوں نے واضح کیا کہ بی ایس پی آئندہ سال تین ریاستوں اُترپردیش، اُتراکھنڈ اور پنجاب میں تنہا مقابلہ کرے گی۔ انہوں نے عوام کو کسی بھی غلط فہمی کا شکار نہ ہونے کا مشورہ دیا، کیونکہ یہ افواہیں پھیلائی جارہی ہیں کہ اکثریت حاصل نہ ہونے کی صورت میں تشکیل حکومت کیلئے بی جے پی کی تائید حاصل کی جائے گی۔

ان افواہوں میں کوئی سچائی نہیں ہے اور صرف مسلمانوں کے ووٹ تقسیم کرنے کیلئے ایسی افواہیں پھیلائی جارہی ہیں۔ مایاوتی نے کہا کہ حقیقت تو یہ ہے کہ ایسی کوئی صورتحال ہی پیدا نہیں ہوگی۔ حکمراں سماج وادی پارٹی پر شدید تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جرائم میں اضافہ اور افراتفری کا ماحول پیدا ہوگیا ہے۔ مظفرنگر ، دادری، متھرا اور بلند شہر میں جو واقعات پیش آئے، اس کی وجہ سے کوئی بھی محفوظ نہیں ہے۔ مایاوتی نے وعدہ کیا کہ وہ اترپردیش میں قانون کی حکمرانی بحال کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ سماج وادی پارٹی نے ملائم سنگھ یادو کے فرزند اکھیلیش یادو اور ان کے بھائی شیوپال سنگھ یادو کے درمیان برتری کی جنگ جاری ہے۔ اس کی وجہ سے یادو ووٹ تقسیم ہوجائیں گے اور ہر کوئی خود اپنے ہی امیدواروں کی شکست کو یقینی بنائے گا۔ ایسے میں مسلمانوں کو چاہئے کہ وہ اپنے ووٹ ضائع نہ کریں، جس سے بی جے پی کی مدد ہوگی۔ مایاوتی نے وزیراعظم نریندر مودی پر سرجیکل حملوں کے نام پر بی جے پی کو فائدہ پہونچانے کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت کی ناکامیوں سے توجہ ہٹانے کیلئے بی جے پی سرجیکل اسٹرائیک کے نام پر سیاسی فائدہ اٹھانے میں مصروف ہے۔
انہوں نے کہا کہ ان حملوں کی کامیابی کا سہرا فوج کے سر جاتا ہے اور بی جے پی قائدین کے بجائے فوج کا احترام کیا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ اُسامہ بن لادن کو ہلاک کرنے کی امریکہ نے جس طرح تشہیر کی تھی، اسی طرح مرکزی حکومت سرجیکل اسٹرائیک کی تشہیر کررہی ہے، حالانکہ ماضی میں اس طرح کی فوجی کارروائی ہوچکی ہے، لیکن کسی حکومت نے اس کا سیاسی فائدہ نہیں اُٹھایا۔

 

مایاوتی کی ریالی میں بھگدڑ
3ہلاک ، 12 زخمی
لکھنؤ۔ 9 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) بی ایس پی سربراہ مایاوتی کی ریالی میں آج بھگدڑ مچ گئی جس کے نتیجہ میں 3 خواتین ہلاک اور 12 افراد زخمی ہوگئے۔ پولیس نے بتایا کہ باب الداخلہ سے سیڑھیوں کے ذریعہ نیچے آنے والے چند لوگ اپنا توازن کھو بیٹھے اور ایک دوسرے پر گر گئے جس کے نتیجہ میں بجنور کی 68 سالہ شانتی دیوی اور ایک نامعلوم خاتون کی دَم گھٹنے سے موت واقع ہوگئی۔ برقی تاروں کے گرنے کی افواہ سے بھگدڑ مچ گئی ۔ بی ایس پی کے ترجمان نے بتایا کہ زخمیوں کو فوری مقامی دواخانہ لے جایا گیا۔

TOPPOPULARRECENT