Sunday , November 19 2017
Home / سیاسیات / مسلم جائیدادیں چھین لینے کیلئے مودی حکومت کی کوشش

مسلم جائیدادیں چھین لینے کیلئے مودی حکومت کی کوشش

قانون جائیداد دشمن کے نفاذ سے حب الوطنی پر سوالیہ نشان
نئی دہلی۔9 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) نریندر مودی حکومت، دستور میں ترمیم کے ذریعہ ملک بھر میں واقع 16 ہزار سے زائد مسلم جائیدادوں کو چھین لینے کی کوشش میں ہے اگرچہ کہ تقسیم ہند کے بعد پاکستان منتقل ہونے والوں کی جائیدادوں کی ضبطی کے لیے ایک قانون موجود ہے اور اس مقصد کے لیے پہلا قانون پاکستان کے خلاف جنگ کے بعد قانون تخلیہ جائیداد منظور کیا گیا تھا۔ لیکن ایک دوسرا قانون جائیداد تخلیہ کی دیکھ بھال کے دفعات کے تسلسل میں ردوبدل کرتے ہوئے قانون جائیداد دشمن بنایا گیا۔ چونکہ قانون تخلیہ جائیداد کے تحت حکومت ہند کو ان املاک کو حاصل کرنے اختیار حاصل ہے۔ جو لوگ اپنی جائیدادیں چھوڑکر پاکستان منتقل ہوگئے تھے لیکن بیشتر جائیدادیں تنازعہ کا شکار ہونے سے مقدمہ بازی شروع ہوگئی تھی جس کے پیش نظر حکومت نے اس قانون کو قانون جائیداد دشمن میں تبدیل کردیا کیوں کہ جائیدادیں چھوڑ کر جانے والوں کے حقیقی وارثوں سے دوسرے رشتہ دار چھین لینا چاہتے ہیں اور جائیدادوں کا تنازعہ عدالت میں قانونی کشاکش کا شکار ہوگیا۔ جس کی ایک مثال بھوپال کے نواب کی جائیدادوں کا ہے۔ پٹوڈی خاندان کا یہ کیس طویل عرصہ سے جبلپور ہائی کورٹ میں زیر تصفیہ ہے۔ ایک اندازہ کے مطابق ملک بھر میں 16000 مسلمانوں کی جائیدادوں کے مقدمات عدالت میں زیر سماعت ہیں جس میں محمد امیر محمد خاں اور راجہ محمود آباد کی لکھنو، سیتاپور اور لکھیم پور میں 936 جائیدادیں ہیں۔ سپریم کورٹ نے 21 نومبر 2005 ء کو یہ تاریخ ساز فیصلہ سنایا ہے کہ اگر دشمن کا انتقال ہوگیا ہے تو ان کے وارث جائیداد کے حق دار ہوں گے بشرطیکہ وہ ہندوستانی شہری ہوں لیکن مرکزی حکومت حق جائیداد سے محروم کرنے کے لیے متواتر آرڈیننس جاری کررہی ہے جبکہ صدر جمہوریہ نے آرڈیننس پر پانچویں مرتبہ دستخط ثبت کرتے وقت اعتراض بھی اٹھایا تھا۔ ستم ظریفی یہ کہ عدالت عظمی نے حال ہی میں یہ ریمارک کیا ہے کہ ایک معاملہ میں دوسری مرتبہ آرڈیننس کی اجرائی دستور کے ساتھ دھوکہ کے مترادف ہوگا۔ مذکورہ آرڈیننس کو قانونی شکل دے دی گئی تو یہ تصور کیا جاسکتا ہے کہ ایم اے ایم خاں کا حشر کیا ہوگا جو کہ 1957 ء میں ان کے والد پاکستان ہجرت کرنے کے باوجود ہندوستان میں رہنے کو ترجیح دی اور سابق ہندوستانی کرکٹ کپتان منصور علی خاں پٹوڈی مرحوم، ان کی اہلیہ شرمیلا ٹیگور اور ان کے بچے سیف، صبا اور سوہا علی خان کو ملک دشمن سمجھا جائے گا اور مودی حکومت ان کے ساتھ غدار جیسا سلوک کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT