Friday , November 24 2017
Home / دنیا / مسلم خاتون کے بال تراشنے سے انکار پر جرمانہ

مسلم خاتون کے بال تراشنے سے انکار پر جرمانہ

اوسلو ، 14 سپٹمبر (سیاست ڈاٹ کام) ناروے میں اسکارف پہنی ایک مسلم خاتون کے بال تراشنے سے انکار اور انہیں ہیئر سیلون سے نکالنے والی ہیئر ڈریسر پر ایک ہزار یورو کا جرمانہ عائد کر دیا گیا۔ فرانسیسی نیوز ایجنسی ’اے ایف پی‘ کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ برس اکتوبر میں ناروے کے جنوب مغربی قصبہ برائن میں مسلمان خاتون ملِکا بیان کے بال کاٹنے سے انکار پر عدالت نے میریٹ ہوڈنے نامی ہیئر ڈریسر پر 10 ہزار کرونر (1200 ڈالر) جرمانہ عائد کیا اور خاتون ہیئر ڈریسر کو 600 ڈالر عدالتی اخراجات کی مد میں بھی ادا کرنے کا حکم دیا۔ عدالت نے کہا کہ شواہد سے ظاہر ہوتا ہے کہ ہیئر ڈریسر نے صرف مسلمان ہونے کی بنا پر جان بوجھ کر ملِکا بیان کے بال کاٹنے سے انکار کیا اور انہیں اپنے سیلون سے باہر نکالا۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ مذہبی امتیاز برتنے پر میریٹ ہوڈنے کو 6 ماہ قید کی سزا بھی سنائی جاسکتی تھی۔ میریٹ ہوڈنے کے وکیل نے مقامی نیوز ایجنسی این ٹی بی کو بتایا کہ ان کی موکلہ اپنے خلاف عدالتی فیصلے کو چیلنج کرنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔ 47 سالہ میریٹ ہوڈنے نے عدالت میں کہا کہ انہوں نے ملکا بیان کو مسلمان ہونے کی بنا پر اپنے سیلون سے نہیں نکالا، بلکہ انہیں لگا کہ مسلم خاتون اسکارف پہن کر کسی سیاسی نظریے کی نمائندگی کر رہی ہیں جسے دیکھ کر وہ خوفزدہ ہوگئیں اور انہوں نے یہ قدم اٹھایا۔ میریٹ ہوڈنے پر پہلے مذہبی امتیاز برتنے پر 8 ہزار کرونر جرمانہ عائد کیا گیا تھا، جسے انہوں نے ادا کرنے سے انکار کر دیا جس کے بعد کیس ضلعی عدالت منتقل کردیا گیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT