Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / مسلم طلبہ کیلئے ہر ضلع میں ماڈل اسکولس اور ہاسٹلس کی تجویز

مسلم طلبہ کیلئے ہر ضلع میں ماڈل اسکولس اور ہاسٹلس کی تجویز

عہدیداروں کے ساتھ سدھیر کمیشن کا اجلاس، مسلمانوں کی تعلیمی، سماجی و معاشی پسماندگی کا جائزہ
حیدرآباد ۔ 28۔ اکتوبر (سیاست نیوز) مسلمانوں کی تعلیمی ، معاشی اور سماجی پسماندگی کا جائزہ لینے والے جی سدھیر کمیشن نے ہر ضلع میں مسلم طلبہ کیلئے ماڈل اسکولس اور ہاسٹلس کے قیام کے علاوہ مختلف پیشہ ورانہ کورسس کے تربیتی مراکز کے آغاز کی تجویز پیش کی ہے۔ کمیشن نے آج محکمہ جات اقلیتی بہبود ، تعلیم ، میڈیکل اینڈ ہیلت اور سٹ ون کے عہدیداروں کے ساتھ اجلاس منعقد کرتے ہوئے اقلیتوں کے بارے میں اسکیمات کے اعداد و شمار طلب کئے۔ کمیشن کے صدرنشین جی سدھیر اور ارکان عامر اللہ خان اور محمد عبدالباری نے اقلیتی طلبہ کیلئے مسابقتی امتحانات کی کوچنگ کی تجویز پیش کرتے ہوئے ایس سی ، ایس ٹی اور بی سی طلبہ کو ٹریننگ فراہم کرنے والے اداروں میں کوچنگ کا اہتمام کرنے کا مشورہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ اقلیتی طلبہ کیلئے علحدہ کوچنگ سنٹرس کے بجائے دیگر طبقات کے ساتھ کوچنگ کے اہتمام سے طلبہ میں مسابقت کا جذبہ پیدا ہوگا۔

کمیشن نے اقلیتی بہبود کی اسکیمات کے فوائد حقیقی مستحقین تک پہنچانے کی ضرورت ظاہر کی اور اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے کہا کہ وہ اسکیمات ، بجٹ اور اس کے خرچ کے بارے میں تفصیلات پیش کریں۔ مختلف اسکیمات کے استفادہ کنندگان کے بارے میں بھی تفصیلات طلب کی گئی ہیں۔ کمیشن نے ضلع واری سطح پر اسکیمات پر عمل آوری کی تفصیلات داخل کرنے کی ہدایت دی۔ کمیشن کا احساس تھا کہ مسلمان حکومت کی اسکیمات سے خاطر خواہ طور پر استفادہ سے قاصر ہیں جس کے لئے عہدیدار ذمہ دار ہیں۔ شہر اور اضلاع میں ماتحت عہدیداروں کی عدم دلچسپی کے سبب یہ صورتحال پیدا ہوئی ہے۔ کمیشن نے بینکوں سے قرض کے حصول میں مسلمانوں کو درپیش دشواریوں کا ذکر کیا

اور عہدیداروں سے کہا کہ وہ اس سلسلہ میں عوام کی رہنمائی کریں۔ مسلمانوں کو بینکوں میں ضمانت فراہم کرنے میں دشواریوں کا سامنا ہے۔ مسلمانوں میں گزیٹیڈ عہدیداروں کی کمی کے باعث اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں کو چاہئے کہ متبادل انتظامات کریں۔ کمیشن نے ایس سی ، ایس ٹی طلبہ کی طرح مسلم طلبہ کیلئے میس چارجس میں اضافے کی تجویز پیش کی۔ ڈائرکٹر اقلیتی بہبود ایم جے اکبر اور مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن شفیع اللہ نے اقلیتی اسکیمات پر عمل آوری کی تفصیلات پیش کیں۔ کمیشن نے کہا کہ اسکیمات کے فوائد زیادہ سے زیادہ مستحقین تک پہنچنے چاہئے۔ سٹ ون کے ڈائرکٹر نے مختلف کورسس 10,000 طلبہ کی ٹریننگ سے واقف کرایا۔ کمیشن نے اضلاع میں سٹ ون کے مراکز کے قیام کی ضرورت ظاہر کی۔ سدھیر کمیشن آف انکوائری آئندہ سال مارچ تک اپنی رپورٹ حکومت کو پیش کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔
کمیشن کو نلگنڈہ ، کریم نگر ، ورنگل اور کھمم اضلاع کا دورہ کرنا ابھی باقی ہے۔ کمیشن مسلمانوں کی صورتحال کے بارے میں ایک سروے رپورٹ حاصل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT