Saturday , July 21 2018
Home / دنیا / مسلم لڑکے کے والد کی درخواست متعصبانہ طور پر خارج

مسلم لڑکے کے والد کی درخواست متعصبانہ طور پر خارج

ڈلاس ۔ 15 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ایک جج نے انتہائی متعصبانہ برتاؤ کرتے ہوئے ایک مسلم باپ کی جانب سے اپنے بیٹے کے ذریعہ گھر میں تیار کی گئی ایک گھڑی کو اپنے اسکول لے جانے پر گرفتار کئے جانے کے خلاف داخل کی گئی ایک درخواست کو مسترد کردیا۔ منگل کے روز یو ایس ڈسٹرکٹ جج سام لنزے نے استدلال پیش کیا کہ محمد الاحسن محمد کی درخواست کو دوبارہ داخل نہیں کیا جاسکتا۔ جج نے اس کے (الاحسن) ارکان خاندان کو مقدمہ دائر کرنے کے تمام قانونی اخراجات برداشت کرنے کی بھی ہدایت کی۔ احمد محمد نامی اسکولی لڑکے کے ارکان خاندان نے یہ شکایت کی تھی ارونگ، ٹیکساس میں واقع اسکول نے احمد محمد کے ساتھ متعصبانہ رویہ اختیار کرتے ہوئے اسے اس وقت جب 2015ء میں وہ 14 سال کا تھا، دہشت گرد قرار دیا تھا جب اس نے اپنے ہاتھوں سے تیار کی گئی ایک کلاک (گھڑی) کو خوشی خوشی اسکول پہنچ کر اپنے ٹیچرس اور ساتھیوں کو دکھانے اسکول آیا تھا۔ احمد پر بم رکھنے کا الزام عائد کیا گیا تھا حالانکہ بعدازاں پولیس نے اس الزام سے دستبرداری اختیار کرلی تھی لیکن اس واقعہ کے بعد احمد پھر کبھی اسکول کو نہیں گیا۔ اس واقعہ کو بین الاقوامی شہرت حاصل ہوئی تھی جس کے بعد اس وقت کے امریکی صدر بارک اوباما نے احمد کو وائیٹ ہاؤس مدعو کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT