Thursday , January 18 2018
Home / دنیا / مشرق وسطی: امریکہ بطور ثالث اپنے کردار پر نظرثانی کریگا

مشرق وسطی: امریکہ بطور ثالث اپنے کردار پر نظرثانی کریگا

امن مذاکرات بچانے کیلیے اسرائیلی و فلسطینی مذاکرات کار پھر ملیں گے

امن مذاکرات بچانے کیلیے اسرائیلی و فلسطینی مذاکرات کار پھر ملیں گے

واشنگٹن ۔ 7 اپریل (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) اسرائیل اور فلسطینی اتھارٹی کے مذاکرات کاروں کے درمیان آج پھر ملاقات ہو گی۔ امریکی اور فلسطینی حکام کے مطابق اس دوطرفہ ملاقات کا مقصد امن مذاکرات میں آنے والے تعطل کو دور کرنا ہے۔ اس سے پہلے اسرائیل اور فلسطین کے مذاکرات کاروں نے پچھلی شب بھی ملاقات کر کے امن مذاکرات میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنے کی تجاویز پر غور کیا ہے۔فلسطینی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ یہ ملاقات تعمیری اور سنجیدہ ماحول میں ہوئی ہے۔ پچھلی رات ہونے والی ملاقات میں دونوں طرف کے مذاکرات کاروں نے امریکی سہولت کاروں سے درخواست کی تھی کہ” ان ملاقاتوں کو جاری رکھا جائے۔”فلسطینی حکام نے آج پیر کو ہونے والی ملاقات کی تصدیق کی تاہم جگہ اور وقت کے بارے میں کچھ نہیں بتایا ہے۔اتوار کی رات ہونے والی ملاقات میں امریکی سفیر مارٹن بھی موجود تھے۔ اسرائیلی حکام کا اتوار کی شب امریکی سفیر کی موجودگی میں ہونے والی ملاقات کے حوالے سے کہنا ہے کہ ملاقات میں کوئی پیشرفت ممکن نہیں ہو سکی ہے۔ آج ہونے والی ملاقات سے پہلے اسرائیلی پارلیمنٹ کا بھی ایک خصوصی اجلاس موسم بہار کی چھٹیوں کے باوجود طلب کیا ہے تاکہ امن مذاکرات کے کے مسقبل کے بارے میں پارلیمنٹ کو اعتماد میں لیا جا سکے۔اسی دوران اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے دو ٹوک انداز میں کہہ دیا ہے کہ اسرائیل امن ?مذاکرات کی کامیابی کیلیے کوئی بھی قیمت دینے کو تیار نہیں ہے۔ ” انہوں نے فلسطین کے خلاف یکطرفہ کارروائی کی بھی دھمکی دی ہے۔ واضح رہے امریکی وزیر خارجہ جان کیری پچھلے ہفتے کے دوران غیر معمولی کوششوں کیلیے مشرق وسطی میں رہے۔ لیکن انہیں بھی اسرائیل کو رام کرنے میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔تاہم امریکی سفیر نے سفارت کاری کو ایک اور موقع دینے کی غرض سے ملاقاتوں کا یہ سلسلہ شروع کرایا ہے۔ دوسری جانب امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے اتوار کے روز کہا ہے کہ امریکا ایک ثالث کے طور پر اسرائیل اور فلسطین کے درمیان امن مذاکرات کیلیے اپنے کردار پر نظر ثانی کیلیے سوچ رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT