Friday , January 19 2018
Home / شہر کی خبریں / مشن کاکتیہ کیلئے 1,000 کروڑروپئے فراہم کئے جائیں

مشن کاکتیہ کیلئے 1,000 کروڑروپئے فراہم کئے جائیں

نبارڈ سے وزیر زراعت ٹی ہریش راؤ کی اپیل ۔ نبارڈ ورکشاپ سے وزیر فینانس کا بھی خطاب

نبارڈ سے وزیر زراعت ٹی ہریش راؤ کی اپیل ۔ نبارڈ ورکشاپ سے وزیر فینانس کا بھی خطاب
حیدرآباد 12 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) نبارڈ کے قرض توسیعی طریقہ کار میں تبدیلی کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے وزیر آبپاشی مسٹر ٹی ہریش راؤ نے زرعی بینک سے کہا کہ وہ ریاست تلنگانہ کو زرعی شعبہ میں فراخدلانہ قرضہ جات فراہم کرے ۔ نبارڈ کے ورکشاپ سے آج خطاب کرتے ہوئے وزیر موصوف نے بینک کی جانب سے قرض فراہم کرنے کے طریقہ کار پر ناراضگی کا اظہار کیا اور کہا کہ کسانوں کو بینک کی جانب سے جتنے قرض فراہم کئے جا رہے ہیں وہ ناکافی ہیں۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ فصل انشورنس اسکیم میں تبدیلی کی جائے جو زرعی شعبہ کیلئے کارگر ثابت ہوسکتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نبارڈ کی جانب سے ملک کی 29 ویں ریاست تلنگانہ میں کسانوں کو معاشی امداد فراہم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے اس کو بحیثیت مجموعی مزید موثر بنانے کی ضرورت ہے ۔ ہریش راؤ نے نبارڈ کے عہدیداروں سے کہا کہ ریاست تلنگانہ میں ’ مشن کاکتیہ ‘ کیلئے 1,000 کروڑ روپئے منظور کئے جائیں ۔ اس پراجیکٹ کا مقصد ریاست میں پانچ سال کے عرصہ میں 46,000 جھیلوں ‘ کنٹوں اور تالابوں کو بحال کرنے کا ہے ۔ حکومت نے ہر سال نو ہزار جھیلوں کو بحال کرنے کا نشانہ مقرر کیا ہے اور اس سلسلہ میں حکومت کے اقدامات جاری ہیں۔ ہریش راؤ نے ریاست میں دیگر فصلوں کیلئے آبپاشی کی سہولتوں میں اضافہ کا تیقن بھی دیا ۔ انہوں نے اسٹوریج کی سہولت فراہم کرنے کا تیقن دیتے ہوئے کہا کہ اگر حکومت یہ سہولت فراہم نہیں کرسکی تو زرعی پیداوار ضائع ہوجائیگی ۔ انہوں نے کہا کہ ایک ہزار کروڑ روپئے کی رقم ریاست کے چھ اضلاع میں ویرہاوزیس تعمیر کرنے پر خرچ کی جائیگی جہاں 21 لاکھ ٹن غذائی اجناس کا ذخیرہ کیا جاسکے گا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سہولت فراہم کرنے سے کسانوں کو اقل ترین امدادی قیمت حاصل کرنے میں بھی مدد مل سکتی ہے ۔ ہریش راؤ نے کہا کہ حکومت نے ریتو بندھو اسکیم کو از سر نوقطعیت دی ہے جس میں کچھ تبدیلیاں کرتے ہوئے کسانوں کو قرض کی حد میں بھی اضافہ کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی جانب سے کسانوں کو ہر ممکن ہسولت اور امداد فراہم کرنے کے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بینکوں کو اور خاص طور پر دیہی علاقوں میں واقع بینکس کو اس بات کو یقینی بنانا چاہئے کہ کسانوں کو بروقت قرض مل سکے اور انہیں دیگر سہولیات بھی فراہم کی جاسکیں جس کے اچھے نتائج برآمد ہوسکتے ہیں۔ حکومت زراعت کے دوسرے شعبہ جات کو بھی امداد فراہم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے ۔ وزیر فینانس ایٹالہ راجندر نے بھی اس ورکشاپ سے خطاب کیا اور کہا کہ نبارڈ سے اضافی امداد سے ان کے حوصلے بلند ہونگے ۔

TOPPOPULARRECENT