Friday , August 17 2018
Home / شہر کی خبریں / مصطفی ہلز سوسائٹی کو اراضی مختص کرنے سے متعلق حکومت سے وضاحت طلبی

مصطفی ہلز سوسائٹی کو اراضی مختص کرنے سے متعلق حکومت سے وضاحت طلبی

مفاد عامہ کے تحت درخواست پر ہائیکورٹ کی ہدایت
حیدرآباد ۔ 21فبروری ( سیاست نیوز) مصطفی ہلز سوسائٹی کو اراضی مختص کرنے کے معاملہ پر ہائیکورٹ نے حکومت سے وضاحت طلب کی ہے ۔ آصف نگر علاقہ میں واقع اراضی کو حکومت نے مصطفیٰ ہلز ہاؤزنگ سوسائٹی کو مختص کیا تھا اور اس سلسلہ میں جی او بھی جاری کیا۔ تاہم کلکٹر حیدرآباد کی جانب سے اس منظوری کو مسترد کرنے کی سفارش پیش کی گئی تھی ۔ تاہم اقدامات میں تاخیر کے سبب مفاد عامہ کی درخواست ہائیکورٹ میں داخل کی گئی توہائیکورٹ نے اپنے احکامات جاری کرتے ہوئے حکومت سے وضاحت طلب کی ہے کہ آیا کلکٹر حیدرآباد کی سفارش پر کس طرح کا فیصلہ کیا گیا ۔ کورٹ کے ان احکامات سے سوسائٹی کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے ۔ کورٹ نے اراضی پر تعمیراتی سرگرمیوں کے متعلق بھی مکمل رپورٹ پیش کرنے کل حکومت کو ہدایت دی ہے اور کورٹ نے اس کیس سے متعلق مزید دریافت کو آئندہ ہفتہ تک ملتوی کردیا ۔ اس خصوص میں کارگذار چیف جسٹس رمیش رنگاناتھ اور جسٹس وجئے لکشمی پر مشتمل بنچ نے یہ احکامات جاری کئے ۔ بتایا جاتا ہے کہ مصطفی ہلز ہاؤزنگ سوسائٹی کیلئے 6 ایکڑ اراضی منظور کرتے ہوئے حکومت نے احکامات جاری کئے تھے اور اس الاٹمنٹ کی منظوری کو چیلنج کرتے ہوئے سی پی آئی ایم پارٹی کے قائد مسٹر ایم سرینواس نے ہائیکورٹ میں مفاد عامہ کی ایک درخواست داخل کی تھی ۔ اس درخواست مفاد عامہ پر گذشتہ روز سنوائی ہوئی ۔ درخواست گذار کے وکیل نے بحث کے دوران بتایا کہ سوسائٹی کے ذمہ داروں نے اراضی کو اپنے قبضہ میں بتاکر فرضی دستاویزات داخل کرتے ہوئے اراضی کو حاصل کیا جبکہ عہدیدارںو کی تحقیقات میں دستاویزات فرضی ثابت ہوئے ‘ باوجود اس کے تاحال کوئی اقدامات نہیں کئے گئے ۔ درخواست گذار کے وکیل نے بحث کے دوران بتایا کہ کلکٹر حیدرآباد کی جانب سے اس اراضی کے الاٹمنٹ کو منسوخ کرنے کی سفارش بھی کی ہے ۔ باوجود اس کے اس ارضی پر تعمیرات جاری ہیں ۔اس بحث کے بعد عدالت نے سارے معاملہ کی تفصیلات کو پیش کرنے کی حکومت کو ہدایت دی ہے ۔ سماعت کو آئندہ ہفتہ تک ملتوی کردیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT