Friday , December 15 2017
Home / ہندوستان / مصنفین اور پا کستان کا مقصد مشترک’’مودی فوبیا‘‘ پیدا کرنا:آرگنائزر

مصنفین اور پا کستان کا مقصد مشترک’’مودی فوبیا‘‘ پیدا کرنا:آرگنائزر

نئی دہلی ۔ 20 ۔ اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) آر ایس ایس کے ترجمان آرگنائزر میں شائع شدہ مضمون کے بموجب ممبئی میں شیوسینا کے حالیہ احتجاجی مظاہروں کی وجہ سے پاکستان میں ہندوستان کی اقلیتوں کے اور مصنفین کے حقوق کے بارے میں اندیشے پیدا ہوگئے ہیں کیونکہ مصنفین بطور احتجاج اپنے ایوارڈس واپس کرتے ہوئے ’’مودی فوبیا‘‘ پیدا کر رہے اور اپنا مقام بنارہے ہیں۔ آرگنائزر نے کہا کہ مصنفین اور پاکستان دونوں کا مقصد وزیراعظم نریندر مودی کے خلاف اندیشے پیدا کرنا ہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ملک گیر سطح پر مختلف احتجاج دیکھ رہے ہیں جن میں مودی زیر قیادت این ڈی اے حکومت پر مذہبی عدم رواداری اور آزادی اظہار اور تقریب کو کچلنے پر کئے جارہے ہیں۔ ممبئی میں شیوسینا نے بھی اسی قسم کا مظاہرہ کیا ہے لیکن اسے پاکستان میں بڑھتی ہوئی عدم رواداری قرار دیتے ہوئے ہندوستان میں اقلیتوں اور مصنفین کے حقوق کے بارے میں شکوک و شبہات پیدا کئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ بعض ممتاز ادبی شخصیات نے آزادی اظہار اور ہندوستان کے سیکولر تانے بانے پر حملے قرار دیتے ہوئے اپنے ایوارڈس واپس کئے ہیں۔ یہے احتجاج بظاہر مختلف نظر آتے ہیں لیکن پاکستان اور مصنفین کا مقصد ایک ہی ہے اور وہ ہے  مودی فوبیا پیدا کرنا آرگنائزر نے اپنے اداریہ میں تحریر کیا ہے کہ احتجاجی مصنفین ’’عدم رواداری کے نظریات‘‘ کو فروغ دے رہے ہیں اور بار بار ہندو دھرم ہندو توا طاقتوں کا نام لے رہے ہیں۔ اداریہ میں کہا گیا ہے کہ شیوسینا کا احتجاج قصوری کے خلاف سمجھ میں آتا ہے ۔ اس قسم کا احتجاج پہلے بھی کیاجاچکا ہے لیکن مصنفین کا احتجاج فہم سے بالاتر ہے۔ اداریہ میں کہا گیا ہے کہ سیکولر دانشوروں اور ذرائع ابلاغ کو نظریاتی طور پر مساوی قرار دینا ہمارے ملک میں ہمیشہ سے ایک غلطی رہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT