Sunday , January 21 2018
Home / عرب دنیا / معتمرین کی صحت کے لئے چند مشورے

معتمرین کی صحت کے لئے چند مشورے

دوحہ۔ 20؍جولائی (سیاست ڈاٹ کام)۔ ماہ رمضان میں عمرہ ادا کرنے کے لئے کئی افراد سعودی عرب کا سفر کرتے ہیں۔ حمد میڈیکل کارپوریشن نے بعض سادہ اقدامات تجویز کئے ہیں جن کے ذریعہ حفظانِ صحت کو یقینی بنایا جاسکتا اور وبائی امراض سے تحفظ حاصل ہوسکتا ہے۔ معتمرین کو سفر کے دوران ان احتیاطی اقدامات کو پیش نظر رکھنا چاہئے۔ ڈاکٹر سعد النعیمی سینئر مشیر برائے ہنگامی حالات کی ادویہ نے کہا کہ تنفس کے امراض بشمول سائنس، حلق اور پھیپھڑوں کا انفکشن جو وائرس سے ہوتا ہے عام امراض ہیں جو عمرہ کے دوران معتمرین کو لاحق ہوسکتے ہیں، کیونکہ مجموعہ کی صورت میں یہ بیماریاں تیزی سے پھیلتی ہیں۔ معتمرین کو کھانسی سے محفوظ رہنے کے لئے احتیاطی اقدامات کرنے چاہئے۔ کھانستے اور چھینکتے وقت ٹشو پیپر استعمال کرکے اسے احتیاط سے ضائع کردینا چاہئے۔ وقفہ وقفہ سے صابن اور پانی سے ہاتھ دھونے چاہئیں۔

آنکھوں، ناک اور منہ کو بار بار ہاتھ نہیں لگانا چاہئے۔ تاہم انہوں نے تنفس کے امراض کی صورت میں فوری طبی امداد حاصل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ بعض احتیاطی اقدامات معتمرین کو میرس وائرس سے ہونے والے تنفس کے امراض سے محفوظ رکھ سکتے ہیں۔ یہ اس علاقہ میں تیزی سے پھیل رہے ہیں اور انتہائی فکرمندی کی وجہ ہیں۔ دو افراد کے قریبی ربط کی وجہ سے یہ مرض پھیلتا ہے۔ اس لئے ایسے افراد سے جن میں اس مرض کی علامات جیسے چھینکنا، کھانسا، ناک بہنا، قئے اور دست کی شکایت ہو ان سے قریبی ربط میں نہیں رہنا چاہئے۔ عالمی تنظیم صحت نے مشورہ دیا ہے کہ ان قطروں سے بچنے کے لئے افظان صحت کے مشیروں سے مشورے حاصل کرنا چاہئے۔ بعض لوگ حفاظت کے خیال سے عمرہ ملتوی کردیتے ہیں ان میں 65 سال سے زیادہ عمر کے افراد، حاملہ خواتین اور 12 سال سے کم عمر بچے شامل ہیں جنہیں کہنہ امراض بشمول کینسر، ذیابیطس، امراض قلب و گردہ، تنفس کے امراض یا مدافعتی نظام کے انتحطاط کے امراض ہوں عمرہ سے گریز کریں۔

عمرہ کی ادائیگی کے دوران دن میں شدید گرمی سے بھی جھلس جانے، جسم میں سیال مادوں کی کمی، پستی اور گرمی کا حملہ ممکن ہیں۔ معتمرین کو سیال کی کمی سے بچنے کے لئے کسرت سے پانی پینا چاہئے۔ خاص طور پر پانی گرم کرکے اور اس کے بعد ٹھنڈا کرکے بوتلوں میں ساتھ رکھلینا چاہئے۔ سن اسکرین باقاعدگی سے لگانا چاہئے اور دھوپ سے بچنے چھتری ساتھ رکھنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ صدمے اور زخموں سے معتمرین کو ماہ رمضان کے دوران مکہ معظمہ کے سفر کے دوران خطرہ ہوسکتا ہے۔ معتمرین شدت کی گرمی کے اوقات سے بچنے کی کوشش کریں اور ایسے وقت کا انتخاب کریں جبکہ معتمرین کی تعداد کم ہوتی ہو۔ عمرہ کے بعد جب حلق کروائیں تو انہیں اس بات کا خیال رکھنا چاہئے کہ صاف ستھری بلیڈس استعمال کی جائیں۔ ایسی بلیڈس جو پہلے سے استعمال ہوچکی ہوں ان میں ہپاٹاٹیز بی اور سی اور ایچ آئی وی کے جراثیم ہوسکتے ہیں۔ ان کے دوبارہ استعمال سے یہ امراض منتقل ہوسکتے ہیں۔ ایک اور احتیاطی تدبیر فرسٹ ایڈ کٹس جن میں پلاسٹرس، ڈریسنگس اور درد شکن دوائیں اور ہمیشہ استعمال کی جانے والی دوائیں شامل ہوں۔ ہمیشہ ساتھ رکھیں۔ ڈاکٹر نعیمی نے کہا کہ واپسی پر اگر کوئی معتمر بیمار ہو جائے اور اس کی حالت ابتر ہوتی جارہی ہو خاص طور پر بخار، کھانسی یا تنفس کے مسائل کی وجہ سے تو اسے فوری قریبی حفظان صحت کے مرکز سے رجوع ہونا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT