Wednesday , December 12 2018

مغربی بنگال دہشت گردی کے مرکز میں تبدیل

کولکتہ۔23 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال کی ترنمول کانگریس حکومت پر خوشامدانہ سیاست کے ذریعہ ریاست کو ’’دہشت گردی کا مرکز‘‘ میں تبدیل کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے بی جے پی رکن پارلیمان یوگی آدتیہ ناتھ نے آج کہا کہ یہ محض ووٹ بینک سیاست کی خاطر حکومت قومی سلامتی سے کھلواڑ کررہی ہے۔ انہوں نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرت

کولکتہ۔23 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال کی ترنمول کانگریس حکومت پر خوشامدانہ سیاست کے ذریعہ ریاست کو ’’دہشت گردی کا مرکز‘‘ میں تبدیل کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے بی جے پی رکن پارلیمان یوگی آدتیہ ناتھ نے آج کہا کہ یہ محض ووٹ بینک سیاست کی خاطر حکومت قومی سلامتی سے کھلواڑ کررہی ہے۔ انہوں نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ووٹ بینک اور خوشامدانہ سیاست کی وجہ سے مغربی بنگال دہشت گردی کے مرکز میں تبدیل ہوچکی ہے۔ یہاں تمام دہشت گرد تنظیمیں جیسے ہوجی، سیمی، لشکر، جمعیت اور دیگر نے اپنے اڈے قائم کررکھے ہیں۔ بردوان دھماکہ اس کا ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج مغربی بنگال سارے ملک میں سب سے غیرمحفوظ ریاست ہے۔ یہاں کوئی بھی بنگلہ دیش میں ہندوؤں پر حملے کی بات نہیں کرتا۔ بنگلہ دیش میں ہندوؤں کی نسل کشی پر ملک بھر میں جو ردعمل دیکھا گیا

اس کی توقع مغربی بنگال میں نہیں کی جاسکتی۔ اس کے برعکس بنگلہ دیشی مداخلت کاروں کا ٹی ایم سی زیرقیادت ریاستی حکومت تحفظ کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ قومی سلامتی کی خاطر یہ سلسلہ بند ہونا چاہئے۔ سوامی آدتیہ ناتھ نے مرکز میں پیشرو کانگریس حکومت پر بھی تنقید کی اور کہا کہ اس نے ایک مخصوص فرقہ کو خوش کرنے کے لئے تاریخ اور ہندوستان کی ثقافت کو تبدیل کرنے کی کوشش کی۔ انہوں نے کہا کہ ہندوؤں کے جذبات رام مندر مسئلہ سے جڑے ہوئے ہیں، کوئی بھی اسے الگ نہیں کرسکتا۔ ایودھیا میں رام مندر تعمیر ہوکر رہے گا۔ بی جے پی اپنے منشور میں یہ کہا ہے کہ دستوری قواعد کی تعمیل کرتے ہوئے ایودھیا میں رام مندر تعمیر کیا جائے گا۔ آدتیہ ناتھ نے کہا کہ گاؤ ذبیحہ کے خلاف قومی قانون کی ضرورت ہے۔ اس میں کیرالا اور مغربی بنگال کو بھی شامل کیا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ یہ دیکھ کر کافی دکھ ہوتا ہے کہ بنگال میں گائے کو کس طرح بے رحمی سے ذبح کیا جاتا ہے جسے ہندو مذہب میں ماں کا درجہ حاصل ہے۔

TOPPOPULARRECENT