Wednesday , September 26 2018
Home / ہندوستان / مغربی بنگال میں اردو میڈیم اسکولوں میں اساتذہ کی شدید قلت

مغربی بنگال میں اردو میڈیم اسکولوں میں اساتذہ کی شدید قلت

سات سال سے اردو دوسری سرکاری زبان ہونے کے باوجود کئی اسکولس بند ہونے کے قریب
کلکتہ 29 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال میں اردو کو دوسری سرکاری زبان کا درجہ حاصل ہونے کے سات سال مکمل ہونے کے بعد بھی ریاست کے اردو میڈیم سیکنڈری، ہائی سیکنڈری اسکولوں میں اساتذہ کی شدید قلت کا مسئلہ حل نہیں ہونے کی وجہ سے بحرانی شکل اختیار کرتا جا رہا ہے۔ تعلیمی معیار میں گراوٹ آنے کے ساتھ ہی کئی اسکولوں میں سائنس و کامرس کے سبجیکٹ کی تعلیم بند ہوگئی ہے اور جہاں اب تک باقی ہے وہاں کئی اہم سبجیکٹ کے اساتذہ نہیں ہیں۔ اس صورت حال میں اردو میڈیم اسکولوں میں زیر تعلیم طلبا ء￿ کا مستقبل تاریک ہوتا ہوا نظرآرہا ہے اور وہ اب اپنے مستقبل کے پیش نظر دوسرے میڈیم کے اسکولوں میں داخلہ کرانے پر مجبور ہیں۔ بنگال اردو اکیڈمی کے سالانہ اردو کتاب میلہ میں شرکت کیلئے آئے مختلف اردو میڈیم اسکولوں کے اساتذہ نے شدت کے ساتھ اس مسئلے کو اٹھا یا اور کہا کہ اگر اردو میڈیم اسکولوں میں اساتذہ کی قلت کا مسئلہ ترجیحی بنیاد پر حل نہیں کیا گیا تو آئند ہ چند سالوں میں اردو اسکول اپنا وجود برقرار نہیں رکھ سکیں گے اور بیشتر اسکول اساتذہ کے نہیں ہونے کی وجہ سے بند ہوسکتے ہیں۔ واضح رہے کہ 2011میں ممتا بنرجی کے اقتدار میں آنے کے بعد اردو کو دوسری سرکاری زبان کا درجہ دیدیا گیا اور اس کیلئے اسمبلی میں لنگویج ایکٹ میں تبدیلی کرکے قانونی درجہ دیدیا گیا۔اس حق کو حاصل کرنے کیلئے اردو برادری کو تین دہائیوں تک جدوجہد کرنا پڑا تھا۔ آل بنگال اردو میڈیم اسکول ایسوسی ایشن نے ستمبر 2016میں ریاست کے سرکاری سیکنڈری و ہائی سیکنڈری اسکولوں کا سروے کرکے ایک رپورٹ جاری کی تھی۔ سروے میں شامل ماسٹر اسلم علی نے بتایا کہ بنگال میں مکمل سرکاری اردو میڈیم سیکنڈری، ہائی سیکنڈری اسکولوں کی کل تعداد 68کے آس پاس ہے جس میں سے 58اسکولوں نے سروے میں تعاون کیا۔ انہوں نے کہا کہ سروے کے مطابق ریاست میں اردو میڈیم سیکنڈری، جونیئر سیکنڈری اور ہائی سیکنڈری اسکولوں میں کل 68585طلباء زیر تعلیم ہیں جس کیلئے اس وقت 1268اساتذہ کی آسامی سیکشن ہیں مگر اس میں ستمبر 2016تک صرف 549اساتذہ ہیں۔اور کل 727اساتذہ کی سیٹیں خالی ہیں اور اس میں 451سیٹیں شیڈول کاسٹ ، شیڈول ٹرائب کیلئے ریزرو ہیں اور 276عام سیٹیں ہیں۔انہوں نے بتایا کہ 2013کے بعد اردو میڈیم جونئر سیکنڈری، سیکنڈری اورہائی سیکنڈری اسکولوں میں کوئی بحالی نہیں ہوئی اس لیے گزشتہ چار سالوں میں اساتذہ کی مزید سیٹیں خالی ہوئی ہوں گی۔ آل بنگال اردو میڈیم اسکول ایسوسی ایشن کے اہم رکن ماسٹراسلم علی اور شمیمہ بانو نے بتایا کہ اردو اسکولوں کا سب سے بڑا مسئلہ ریزرویشن ہے۔ چوں کہ شیڈول کاسٹ ، شیڈول ٹرائب کیلئے ریزرو سیٹوں پر کوئی امیدوار نہیں آتا ہے اس کی وجہ سے یہ سیٹیں خالی خالی رہ جاتی ہیں بلکہ اس میں اضافہ ہی ہوتا چلاجاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ 2010میں اردو میڈیم اسکولوں کے اساتذہ کی تحریک کی وجہ سے سابق وزیرا علیٰ بدھا دیب بھٹا چاریہ نے 101 ریزرو سیٹوں کو ڈی ریزرو کردیا تھا او ر اس کے بعد اسکولوں میں بحالی ہوئی۔مگر یہ قدم عارضی تھا۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ 4سالوں میں جنرل سیٹوں پر بھی بحالی نہیں ہوئی اس کی وجہ سے 276کے قریب اساتذہ کی جنرل سیٹیں خالی ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT