Friday , November 24 2017
Home / Top Stories / مغربی ممالک کے ساتھ سکیورٹی تعاون مسترد:بشارالاسد

مغربی ممالک کے ساتھ سکیورٹی تعاون مسترد:بشارالاسد

دمشق میں بین الاقوامی نمائش کے قریب راکٹ حملہ
دمشق ۔ /20 اگست (سیاست ڈاٹ کام) صدر شام بشارالاسد نے مغربی ممالک کے ساتھ کسی طرح کا سکیورٹی تعاون اور ان کے سفارتخانے دوبارہ کھولنے کا امکان مسترد کردیا ۔ انہوں نے کہا کہ جب تک مغربی ممالک اپوزیشن اور باغی گروپس کے ساتھ روابط منقطع نہ کریں تب تک کسی طرح کا تعاون ممکن نہیں ۔ شام میں جہاں 6 سال سے جنگ جاری ہے آج پہلی بین الاقوامی نمائش کا اہتمام کیا گیا تھا ۔بشارالاسد نے آج جیسے ہی اپنی تقریر ختم کی اسی وقت ایک راکٹ یہاں آگرا ۔ اس کے نتیجہ میں کئی افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ۔ بشارالاسد کا یہ تبصرہ ایسے وقت سامنے آیا جبکہ ان کی فوج اور موافق ایران شدت پسندوں نے سارے ملک پر اپنی گرفت مضبوط کرلی ہے اور انہیں روسی فضائی حملوں کے ذریعہ مدد مل رہی ہے ۔ دمشق میں کئی شامی سفارتکاروں سے خطاب سے قبل بشارالاسد نے روس ، ایران ، چین اور لبنان کی حزب اللہ کی تعریف کی جنہوں نے لڑائی کے دوران ان کی حکومت کی مدد کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جب بھی سیاسی ، معاشی اور ثقافتی روابط کی بات ہوگی تو ان کا ملک مشرق کی طرف توجہ دے گا ۔ہمارے ان دوستوں کی سیاسی ، معاشی اور فوجی مدد کی وجہ سے ہم اپنا قبضہ دوبارہ برقرار رکھ پائے اور جنگ کے نقصانات کو کم کرسکے ۔ ان کامیابیوں اور دہشت گردی کو کچلنے میں یہی ہمارے پارٹنرس ہیں۔ بشارالاسد نے واضح طور پر کہا کہ ان تمام ممالک جنہوں نے اپوزیشن کا ساتھ دیا ان کے ہمراہ سکیورٹی تعاون نہیں ہوگا اور سفارتخانے بھی نہیں کھولے جائیں گے ۔ اس ضمن میں پھر کبھی بات ہوگی ۔ واضح رہے کہ شام کا یہ بحران مارچ 2011 ء میں شروع ہوا اور اب تک 4 لاکھ افراد ہلاک ہوچکے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT