Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / مقبوضہ کشمیر پاکستان کا ہے، بی جے پی ہندوئوں اور مسلمانوں کو لڑانے میں مصروف

مقبوضہ کشمیر پاکستان کا ہے، بی جے پی ہندوئوں اور مسلمانوں کو لڑانے میں مصروف

ہم نے کشمیر کی آزادی نہیں بلکہ خوداختیاری کا مطالبہ کیا ہے: فاروق عبداللہ

جموں، 18نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے پاکستان زیر قبضہ کشمیر کے حوالے سے اپنے حالیہ بیانات پر ہونے والی تمام تر تنقید اور قانونی مہم جوئی کو نظرانداز کرتے ہوئے رواں ماہ میں تیسری مرتبہ کہا ہے کہ سرحد کے اس پار والا کشمیر پاکستان کا حصہ ہے۔ انہوں نے یہ بھی دہرایا کہ پاکستان نے چوڑیاں نہیں پہن رکھی ہیں۔ فاروق عبداللہ نے کہا کہ شیو سینا بکواس سینا اور اس طرح کی دوسری تنظیموں سے وابستہ لوگ اصلی پاکستان ہیں کیونکہ وہ لوگوں کو مذہب کے نام پر لڑاتے ہیں۔ انہوں نے ریاست کی محبوبہ مفتی کی قیادت والی مخلوط حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس حکومت نے کرسی کے لئے سب کچھ قربان کردیا ہے ۔ فاروق عبداللہ نے ان باتوں کا اظہار ہفتہ کو یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر شیر کشمیر بھون میں ان کے اعزاز میں منعقدہ تہنیتی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ یہ تہنیتی تقریب فاروق عبداللہ کو حال ہی میں دوبارہ پارٹی صدر منتخب کئے جانے کے تناظر میں منعقدکی گئی تھی۔ فاروق عبداللہ نے کہا کہ نیشنل کانفرنس خود اختیاری کا مطالبہ پاکستان یا چین سے نہیں کررہی ہے بلکہ اس خود اختیاری کا مطالبہ کررہی ہے جو ریاست کو پہلے حاصل تھی۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے آزادی نہیں مانگی۔ مودی جی سے میں کہنا چاہتا ہوں کہ کب نیشنل کانفرنس نے کہا کہ ہم آزادی چاہتے ہیں۔ کب ہم نے کہا کہ ہمیں پاکستان کے ساتھ جانا ہے ۔ نیشنل کانفرنس نے اپنی خودمختاری مانگی ہے ۔ وہ خودمختاری جس کو ہم نے اسمبلی میں منظور کیا ہے ۔ وہ خودمختاری ملک کے آئین میں ہے ، پاکستان کے آئین میں نہیں۔ وہ چین کے آئین میں نہیں ہے ۔ وہاں لکھا ہے کہ دفعہ 370 آپ کو یہ حق دیتا ہے کہ آپ اس زمین کے مالک ہیں’۔ نیشنل کانفرنس صدر نے ریاست کو خصوصی موقف عطا کرنے والی دفعہ 35 اے کے خلاف ہورہی سازشوں کے حوالے سے کہا کہ خودمختاری دینے کے بجائے وہ 35 اے کو نکالنا چاہتے ہیں۔ شور کرنے والے یہ جموں والے (بی جے پی والے ) جنہوں نے 26 سیٹیں لی ہیں، ان سے کہئے کہ پہلا حملہ آپ پر ہوگا۔ پہلے لوگ آپ کی زمینوں پر حملہ کریں گے ۔ یہ صرف الیکشن کیلئے دھوکہ دے رہے ہیں۔ مسلمانوں اور ہندؤں کو لڑانے کی کوشش کررہے ہیں’۔ بی جے پی لیڈر رنجیت بہادر شریواستوکی مسلمانوں کو دھمکی کے حوالے سے فاروق عبداللہ نے کہا ‘آج دیکھئے اترپردیش میں مسلمانوں کو دھمکایا جاتا ہے کہ خبردار تم نے ہمیں ووٹ نہیں دیا تو ہم تمہیں دکھائیں گے۔ یہ ہندوستان تمہارے باپ کا ہندوستان نہیں ہے ۔ یہ ہندوستان سب کا ہے ۔ انہیں آئینی حق ہے کہ وہ کس کو ووٹ دینا چاہتے ہیں اور کس کو نہیں دینا چاہتے ہیں۔ کسی سے آپ زور زبردستی نہیں کرسکتے ۔ ان حرکتوں سے تم نے ایک پاکستان تو بنا ڈالا اور کتنے پاکستان بناؤ گے۔
کتنے اور ٹکڑے کرو گے ہندوستان کے ۔ ہم نے تو مضبوط ہندوستان کے لئے ووٹ دیا ہے ۔ ہم نے کمزور ہندوستان کے لئے کبھی ووٹ نہیں دیا ہے ۔ اگر انہیں یہ چیزیں کرنی ہیں تو میں ان سے کہتا ہوں کہ نیشنل کانفرنس ان سے لڑنے کے لئے تیار ہے ۔ شیطان تھوڑی دیر کے لئے کامیاب ہوسکتا ہے ۔ آخر کار شیطان کو گرنا ہے اور وہ گرے گا’۔

 

TOPPOPULARRECENT