Tuesday , December 12 2017
Home / ہندوستان / مقتول والد کی آخری خواہش کی تکمیل، ہونہار بیٹی جج منتخب ہوگئی

مقتول والد کی آخری خواہش کی تکمیل، ہونہار بیٹی جج منتخب ہوگئی

مظفر نگر 17 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) مظفر نگر کی ایک ہونہار مسلم لڑکی نے اپنی محنت و جستجو کے ذریعہ جج بنتے ہوئے اپنے مقتول والد کے خواب کو شرمندہ تعبیر کردیا۔ 1992 ء میں انجم سیفی بمشکل چار سال کی لڑکی تھی جب اُس کے والد رشید احمد کی گولیوں سے چھلنی نعش گھر پہونچی تھی۔ ہارڈویر دوکان چلانے والے اس شخص کو جبری وصولی کرنے والے غنڈوں نے اندھا دھند فائرنگ میں ہلاک کردیا تھا جب وہ ایک ٹھیلہ بنڈی والے کو غنڈوں سے بچانے کی کوشش کررہے تھے۔ انجم اس وقت بہت کمسن تھی لیکن اس کے ذہن میں اپنے بہادر والد کی دھندلی یاد رہ گئی تھی جو اپنی بیٹی کو جج بنانا چاہتے تھے۔ جس کے 25 سال بعد انجم سیفی نے جو اب 29 سال کی ہوچکی ہیں، جمعہ کو اپنے والد کے خواب کو حقیقت میں بدل دیا۔ جب ان کا نام اترپردیش پبلک سرویس کمیشن (یو پی پی ایس سی) کی طرف سے معلنہ سیول جج جونیر ڈیویژن امتحانات کے کامیاب امیدواروں کی فہرست میں آگیا۔ جس پر بے پناہ خوشی کا اظہار کرتے ہوئے انجم کی والدہ حمیدہ بیگم اپنی بیٹی کی کامیابی کی مبارکباد دینے والوں سے یہی کہتی رہیں کہ ’’اگر وہ (مرحوم شوہر) آج رہتے تو بہت خوش ہوتے‘‘۔

TOPPOPULARRECENT