Saturday , January 20 2018
Home / Top Stories / ملک میں لڑکیوں کیلئے پی جی تک مفت اقامتی تعلیمی نظام کی تجویز

ملک میں لڑکیوں کیلئے پی جی تک مفت اقامتی تعلیمی نظام کی تجویز

مرکزی حکومت کے کابینی مشاورتی بورڈ کا ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ کڈیم سری ہری کی قیادت میں اجلاس ، تعلیمی امور کا جائزہ
حیدرآباد ۔ 9 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز ) : ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ کڈیم سری ہری نے ملک میں لڑکیوں کی حوصلہ افزائی کے لیے پوسٹ گریجویٹ ( پی جی ) تک مفت اقامتی تعلیمی نظام شروع کرنے کا مرکزی حکومت کو مشورہ دیا ۔ واضح رہے مرکزی حکومت نے لڑکیوں کی تعلیم کو فروغ دینے کے لیے ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ کڈیم سری ہری کی صدارت میں کابینی اڈوائزری بورڈ ان ایجوکیشن تشکیل دی ہے ۔ اس کمیٹی کے گوہاٹی ، دہلی اور بھونیشور میں اجلاس منعقد ہوچکے ہیں ۔ چوتھا اجلاس حیدرآباد میں منعقد ہوا ہے ۔ اس اجلاس میں جھارکھنڈ کے وزیر تعلیم نیرجا یادو ، آسام کے وزیر تعلیم بسوا شرما محکمہ انسانی فروغ وسائل کے اسپیشل سکریٹری رینارائے ، ممبر سکریٹری میناکشی گارک کے علاوہ دوسروں نے شرکت کی ۔ ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہری نے ریاست تلنگانہ کے محکمہ تعلیم میں لائے گئے اصلاحات ، لڑکیوں کی تعلیم کے لیے کئے جانے والے اقدامات سے اجلاس کو واقف کرایا ۔ بعد ازاں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کڈیم سری ہری نے کہا کہ حیدرآباد میں منعقدہ اجلاس میں لڑکیوں کی تعلیم کو فروغ دینے کے لیے مختلف پہلوؤں کا جائزہ لیا گیا ۔ جس طرح تلنگانہ ریاست میں لڑکیوں کو ریسڈنشیل اسکولس و کالجس کے ذریعہ مفت تعلیم فراہم کی جارہی ہے ۔ اس طرح سارے ملک میں پی جی تک مرکزی حکومت لڑکیوں کو ریسڈنشیل تعلیمی نظام فراہم کرے ۔ تلنگانہ حکومت ایس سی ایس ٹی طبقہ کی لڑکیوں کو پہلی جماعت سے ڈگری تک ریسڈنشیل تعلیم فراہم کررہی ہے ۔ مرکزی حکومت ملک کے تمام ریاستوں میں لڑکیوں کے لیے علحدہ علحدہ یونیورسٹیز قائم کریں ۔ کے جی بی وی میں لڑکیوں کو چھٹویں تا آٹھویں جماعت کی تعلیم دی جارہی ہے ۔ جس کو انٹر تک توسیع دینے پر زور دیا ۔ ماڈل اسکول میں طالبات کی تعداد کو 100 سے بڑھاکر 200 تک پہونچا دی جائے ۔ بالغ لڑکیوں کی صحت و تندرستی پر خصوصی توجہ دینے کے لیے اسکولس میں کونسلرس کا انتخاب کیا جائے ۔ انہیں ہیلت کٹس تقسیم کیا جائے ۔ کیندریہ ودیالیہ ، جواہر ونودیا تعلیمی اداروں میں انگلش میڈیم سی بی ایس کی تعلیم دی جارہی ہے ۔ اس طرح کے ریسڈنشیل نظام کی تعداد میں اضافہ کیا جائے ۔ لڑکیوں کے تعلیمی اداروں میں سیکوریٹی ، بیت الخلاؤں کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے ۔ تعلیمی اداروں میں اکیڈیمک ماحول فراہم کیا جائے ۔ عنقریب انسانی فروغ وسائل کی جانب سے ملک کی تمام ریاستوں کے تعلیمی نظام کا جائزہ لیتے ہوئے 10 تا 15 رہنمایانہ اصول کا انتخاب کرتے ہوئے مرکزی حکومت کو قطعی رپورٹ پیش کرنے 15 اور 16 جنوری کو دہلی میں ایک اور اجلاس طلب کرنے کا اعلان کیا ۔

TOPPOPULARRECENT