Monday , November 20 2017
Home / ہندوستان / ملک کی خواتین کیلئے ’’یوم سیاہ‘‘

ملک کی خواتین کیلئے ’’یوم سیاہ‘‘

اب وقت آگیا کہ ہم موم بتی جلوس نہیں مشعل اٹھالیں: سواتی ملیوال
نئی دہلی۔21 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) دہلی خواتین کمیشن کی سربراہ سواتی ملیوال نے آج 16 ڈسمبر اجتماعی عصمت ریزی مقدمہ کے نابالغ مجرم کی رہائی کو ناکام بنانے کی لمحہ آخر تک کی گئی کوشش میں مایوسی کو ’’خواتین کے لئے یوم سیاہ‘‘ سے تعبیر کیا۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو دھوکہ دیا گیا ہے اور یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی کہ ایک نئے قانون کے ذریعہ سخت ترین سزاء کو یقینی بنایا جائے۔ لیکن یہ قانون اب بھی راجیہ سبھا میں زیر تصفیہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ ملک کی تاریخ میں خواتین کے لئے یوم سیاہ ہے۔ انہیں یقین ہے کہ راجیہ سبھا نے اس قانون کو منظور نہ کرتے ہوئے ملک کو دھوکہ دیا ہے۔ اگر ایسا نہ کیا جاتا تو سنگین جرائم کا ارتکاب کرنے والے نابالغ افراد کو بھی سخت سے سخت یقینی ہوسکتی تھی۔ دہلی کمیشن برائے خواتین کی سربراہ نے سپریم کورٹ کے باہر ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا۔ انہوں نے جوینائل جسٹس ایکٹ میں ترمیمی بل کا حوالہ دیا جو ابھی تک راجیہ سبھا میں زیر تصفیہ ہے۔ اس مجوزہ ترمیمی بل کے ذریعہ 16 تا 18 سال کی عمر کے بچوں کو جو انتہائی سنگین جرائم میں ملوث ہوں سخت سزاء یقینی بنائی گئی ہے۔ ملیوال نے کہا کہ ججس نے ان سے کہا کہ وہ ان کی تشویش سے تعلق خاطر کا اظہار کرتے ہیں لیکن موجودہ قانون میں تبدیلی کی فی الحال کوئی گنجائش نہیں ہے۔ انہوں نے کہا اب وقت آچکا ہے کہ موم بتیوں کا جلوس ختم کیا جائے اور خواتین کو انصاف کا مطالبہ کرتے ہوئے مشعل اٹھالینی چاہئے۔ 16 ڈسمبر اجتماعی عصمت ریزی مقدمہ میں ملوث نابالغ کے تین سال پورے ہوتے ہی کل اسے رہا کیا جارہا تھا اور آخری لمحہ میں ملیوال نے سپریم کورٹ سے رجوع ہوکر رہائی پر حکم التوا حاصل کرنے کی کوشش کی لیکن انہیں ناکامی ہوئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT