Sunday , November 19 2017
Home / Top Stories / ملک کے کئی شہروں میں طلبہ کے احتجاجی مظاہرے

ملک کے کئی شہروں میں طلبہ کے احتجاجی مظاہرے

کنہیا کمار ضمانت کیلئے سپریم کورٹ سے رجوع، تشدد میں بی جے پی ایم ایل اے ملوث
نئی دہلی ۔ 18 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) دہلی اور ملک کے کئی شہروں میں آج ہزاروں طلبہ نے جواہر لال نہرو یونیورسٹی اسٹوڈنٹس یونین لیڈر کنہیا کمار کی گرفتاری کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ کنہیا کمار اپنی ضمانت کیلئے راست سپریم کورٹ رجوع ہوچکے ہیں۔ سینئر وکیل نے دہلی پولیس پر الزام عائد کیا کہ پٹیالہ ہاؤز کورٹ تشدد میں دہلی پولیس ملازمین شامل ہیں۔ گذشتہ دو دن کے دوران تشدد کے واقعات کے بعد وکرم چوہان کے بشمول کئی وکلاء نے کنہیا کمار پر حملے کیلئے سپریم کورٹ کے احکامات کی مدافعت کی اور اسے رہا کرنے پر زور دیا۔ دہلی وکلاء کی تنظیم نے عملاً پٹیالہ ہاؤز کورٹ میں حملہ آور ہونے والے کالے کوٹ والوں کی مدافعت کی ہے اور دعویٰ کیا ہیکہ کچھ وکلاء کی بھیس میں بیرونی عناصر عدالت میں گھس کر تشدد برپا کررہے تھے۔ بی جے پی ایم ایل اے او پی شرما جو پیر کے تشدد میں ملوث ہیں، کو آج دہلی پولیس نے گرفتار کرلیا ہے لیکن انہیں ضمانت پر فوری رہا کیا گیا۔ پہلی مرتبہ ایم ایل اے بننے والے شرما سے تلک مارگ پولیس اسٹیشن میں 8 گھنٹے تک پوچھ گچھ کی گئی۔ سپریم کورٹ میں کنہیا کمار کی درخواست ضمانت پیش کی گئی ہے۔ ملک بھر کے مختلف ریاستوں میں کنہیا کمار کی ضمانت کیلئے طلبہ نے ریالی نکالی اور احتجاجی مظاہرہ کیا۔ دہلی، پٹنہ، چینائی اور حیدرآباد میں کمار کی رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ طلبہ نے وندے ماترم کے نعرے لگائے اور اے بی وی پی کے طلبہ کے ارکان نے جو آر ایس ایس سے ملوث ہیں، احمدآباد، بنگلور، ممبئی اور کولکتہ میں ریالی نکالی اور جواہر لال نہرو یونیورسٹی میں موجود قوم دشمن عناصر کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT