Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / ممبئی میں کل سنٹرل حج کمیٹی کا اجلاس، حج انتظامات و دشواریوں کا جائزہ

ممبئی میں کل سنٹرل حج کمیٹی کا اجلاس، حج انتظامات و دشواریوں کا جائزہ

ریاستی حج کمیٹیوں کے ایگزیکیٹیو آفیسرس و اسپیشل آفیسرس مدعو، تلنگانہ سے پروفیسر ایس اے شکور کی روانگی
حیدرآباد۔/28اکٹوبر، ( سیاست نیوز) سنٹرل حج کمیٹی کا اجلاس 30 اکٹوبر کو ممبئی میں منعقد ہوگا جس میں حج 2017 میں کئے گئے انتظامات اور مختلف ریاستوں کو پیش آئی دشواریوں کا جائزہ لیا جائے گا۔ اجلاس میں ریاستی حج کمیٹیوں کے ایکزیکیٹو آفیسرس اور اسپیشل آفیسرس کو مدعو کیا گیا ہے۔ تلنگانہ حج کمیٹی کے اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور اجلاس میں شرکت کیلئے29اکٹوبر کی شام ممبئی روانہ ہوں گے۔ اجلاس میں حج 2017 کے سلسلہ میں تمام ریاستی حج کمیٹیاں اپنی رپورٹ پیش کریں گی۔ توقع ہے کہ مرکز کی نئی حج پالیسی پر غور و خوض کیا جاسکتا ہے۔ مرکزی وزارت اقلیتی اُمور نے نئی حج پالیسی کا مسودہ تمام ریاستی حج کمیٹیوں کو روانہ کیا ہے۔ نئی پالیسی کے سلسلہ میں مذہبی رہنماؤں کی جانب سے کئی اعتراضات کئے گئے کیونکہ اس میں شامل بعض نکات شریعت سے ٹکرارہے ہیں۔ مرکز نے ابھی تک پالیسی کو منظوری نہیں دی ہے۔ اسپیشل آفیسر تلنگانہ حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور حج 2017 میں تلنگانہ کے حجاج کرام کے تجربات اور دشواریوں پر مشتمل رپورٹ پیش کریں گے۔ حج کے موقع پر بعض عمارتوں کے انتخاب میں مقررہ قواعد کو نظرانداز کرنے کے سبب حجاج کرام کو دشواریوں کا سامنا کرنا پڑا ۔ خاص طور پر مدینہ منورہ میں حاصل کردہ بعض عمارتیں کافی فاصلے پر تھیں جس کے باعث حجاج کرام کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ ایام حج کے دوران بس سرویسیس کے سلسلہ میں بھی حجاج کرام نے شکایت کی جس سے حج کمیٹی کو واقف کرایا جائے گا۔ تلنگانہ حج کمیٹی اس طرح کی دشواریوں کے خاتمہ کیلئے تجاویز پیش کرے گی تاکہ حجاج کرام کو آئندہ سال دشواری نہ ہو۔ تلنگانہ حج کمیٹی پر نئی حج پالیسی کے اعتبار سے حج 2018 سے ذمہ داری میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ مرکزی حکومت 21 موجودہ ایمبارگیشن پوائنٹس کی تعداد کو گھٹاکر 9 کرنا چاہتی ہے۔ اگر اس فیصلہ پر عمل کیا گیا تو آندھرا پردیش، کرناٹک اور ٹاملناڈو کے حجاج کرام کی بڑی تعداد کو حیدرآباد سے روانہ کیا جائے گا۔ 2017 میں حیدرآباد سے 6500 عازمین روانہ ہوئے تھے لیکن نئی حج پالیسی پر عمل آوری کی صورت میں یہ تعداد 10تا15 ہزار تک بڑھ جائے گی۔ آندھرا پردیش حکومت وجئے واڑہ میں ایمبارگیشن پوائنٹ کے آغاز کی کوشش کررہی ہے لیکن مرکز کی نئی پالیسی سے یہ ممکن دکھائی نہیں دیتا اور ہمیشہ کیلئے آندھرا پردیش کے عازمین حج کو حیدرآباد سے روانہ کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT