Tuesday , December 12 2017
Home / سیاسیات / ممتابنرجی پر مسلمانوں کی خوشامد کا الزام چیف منسٹر مغربی بنگال کی جانب سے تردید

ممتابنرجی پر مسلمانوں کی خوشامد کا الزام چیف منسٹر مغربی بنگال کی جانب سے تردید

نئی دہلی۔21 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) ممتابنرجی کی حکومت مغربی بنگال پر ’’فرقہ وارانہ سیاست‘‘ سیکولرازم کی آڑ میں کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے بی جے پی نے آج کلکتہ ہائیکورٹ کے حکمنامہ کی ستائش کی، جس میں درگا کی مورتیوں کے یکم ؍ ستمبر کو وسرجن نہ کرنے کے ریاستی حکومت کے احکام کو کالعدم قرار دیا۔ کولکتہ سے موصولہ اطلاع کے بموجب مغربی بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش نے چیف منسٹر ممتابنرجی کے روہنگیا پناہ گزینوں کے بارے میں تبصرہ کا مذاق اڑاتے ہوئے الزام عائد کیا کہ ترنمول کانگریس مغربی بنگال کو دہشت گردوں اور جہادیوں کی محفوظ پناہ گاہ میں تبدیل کررہی اور ووٹ بینک کی پالیسی پر عمل کررہی ہے۔ کولکتہ سے موصولہ اطلاع کے بموجب چیف منسٹر مغربی بنگال ممتابنرجی نے آج مسلمانوں کی خوشامد کے الزام کو ان کی توہین قرار دیا اور کہاکہ وہ ہندوؤں، عیسائیوں اور بدھ مت کے پیروؤں کی تمام تقاریب میں شرکت کرتی ہیں۔ صرف مسلمانوں کے پروگراموں کی کی نہیں۔ انہوں نے ایک درگا پوجا پنڈال کا افتتاح بھی کیا تھا۔ پھر ان پر مسلمانوں کی خوشامد کا الزام کیسے عائد کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT