Tuesday , February 20 2018
Home / Top Stories / ممتا بنرجی کے سامنے بی جے پی کے مکل رائے مکمل ناکام

ممتا بنرجی کے سامنے بی جے پی کے مکل رائے مکمل ناکام

کولکاتا 2 فروری (سیاست ڈاٹ کام) ترنمول کانگریس کے سابق ’’چانکیا‘‘ مکل رائے جنھوں نے حال ہی میں ترنمول کانگریس سے استعفیٰ دے کر بی جے پی میں شمولیت اختیار کی تھی، بی جے پی کی امیدوں پر کھرا اُترنے میں ناکام ہوگئے۔ حالانکہ مکل رائے کے بی جے پی میں شامل ہونے کے بعد زعفرانی پارٹی کو یہ امید تھی کہ اب وہ مغربی بنگال میں ممتا بنرجی کا مقابلہ بہ آسانی کرپائے گی۔ تاہم گزشتہ روز کے ضمنی انتخابات میں ٹی ایم سی امیدوار ساجدہ احمد کی 4 لاکھ 70 ہزار سے زائد ووٹوں سے کامیابی نے بی جے پی کی اُمیدوں پر پانی پھیر دیا۔ اس سے پہلے یہی مکل رائے ممتا بنرجی کی پارٹی ٹی ایم سی میں کامیابی کے نائک ہوا کرتے تھے۔ ضمنی انتخابات میں ایسا محسوس ہورہا تھا کہ بی جے پی نواپاڑہ کی اسمبلی اور الوبیریا لوک سبھا سیٹ پر ترنمول کانگریس کو کانٹے کی ٹکر دے گی لیکن دونوں سیٹوں پر بی جے پی کو کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا وہ بھی تب جب مکل رائے نے بی جے پی کیلئے اپنی پوری طاقت جھونک دی تھی۔ حالانکہ مکل رائے کو بنگال کی سیاست کا ماہر کھلاڑی مانا جاتا ہے لیکن وہ اِس حقیقت پر بھروسہ قائم کرنے میں ناکام رہے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ مکل رائے پرگنہ ضلع کے نواپاڑہ میں ہی رہتے ہیں لیکن یہاں بی جے پی کافی مشکل سے سی پی آئی (ایم) کو پیچھے چھوڑتے ہوئے دوسرے نمبر پر رہی۔ ٹی ایم سی کے سنیل سنگھ کو 7 لاکھ 29 ہزار 1101 ووٹ حاصل ہوئے۔ جبکہ بی جے پی کے سندیپ بنرجی کو صرف 7 ہزار 1138 ووٹ ہی مل سکے۔واضح رہے کہ مکل رائے ترنمول کانگریس کے سابق قدآور لیڈر تھے جنھوں نے گزشتہ سال بی جے پی میں شمولیت اختیار کرلی جس پر بی جے پی نے اِس اُمید کا اظہار کیا تھا کہ اُن کے تجربے سے پارٹی کو فائدہ ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT