Tuesday , December 12 2017
Home / ہندوستان / مندر گراکر تاج محل بنایا گیا، بی جے پی ایم ایل اے کا بیان

مندر گراکر تاج محل بنایا گیا، بی جے پی ایم ایل اے کا بیان

تاریخ دانوں کا ایقان ہے کہ یہاں ایک شیو مندر تھا، مغل شہنشاہ نے منہدم کروایا
آگرہ 26 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش کی حکمراں پارٹی بی جے پی کے رکن اسمبلی نے کہاکہ تاج محل کو شیو مندر گراکر تعمیر کیا گیا ہے۔ اس ایم ایل اے کا یہ بیان ایک ایسے وقت سامنے آیا جب چیف منسٹر آدتیہ ناتھ یوگی نے 17 ویں صدی کے اس شاندار محبت کی نشانی یادگار عمارت تاج محل کا دورہ کیا۔ آگرہ شمال کے رکن اسمبلی جگن پرساد گارگ نے تاج محل کے احاطہ میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ مغلوں نے پہلے مندر کو گرادیا اور اس کے بعد اس مقام پر تاج محل تعمیر کروایا۔ کئی تاریخ دانوں کا بھی یہی ماننا ہے کہ یہاں ایک شیو مندر تھا۔ اس مقام پر تاج محل بنوایا گیا۔ مغلوں نے سب سے پہلے شیومندر کو گراکر اس کی نشانی مٹادی اور تاج محل تعمیر کیا۔ یہی ایک حقیقت ہے۔ تاہم گارگ نے مزید کہاکہ بی جے پی بھی اس عمارت تاج محل کو مانتی ہے اور اسے ایک اہم عمارت سمجھتی ہے کیوں کہ بی جے پی بھی تاریخی عمارتوں کی اہمیت کو جانتی ہے۔ یہ دنیا کے سات عجائب میں سے ایک ہے۔ تاج محل کو دیکھنے ہر سال لاکھوں لوگ آگرہ آتے ہیں۔ آگرہ اس یادگار عمارت کے باعث مشہور ہے۔ بی جے پی کے اس رکن اسمبلی نے اپنا یہ شرپسندانہ بیان اس وقت دیا جب وہ خود بھی چیف منسٹر آدتیہ ناتھ یوگی کے دورہ کے موقع پر تاج محل پہونچے تھے۔ ان کے علاوہ دیگر بی جے پی کے سینئر قائدین بھی تھے۔ ان میں ریاستی وزیر سیاحت ریٹا بہوگنا جوشی بھی شامل ہیں۔ آدتیہ ناتھ کا یہ دورہ تاج محل ریاست یوپی کے پہلے بی جے پی چیف منسٹر کی حیثیت سے ہوا ہے۔ ان کے دورہ کے ذریعہ بی جے پی تاج محل کے تعلق سے پیدا کردہ تنازعات کو دور کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ تاج محل کے خلاف بی جے پی قائدین کے تبصرے اور ان کی تعصب پسندی کا سلسلہ اس وقت شروع ہوا جب یوپی حکومت کے محکمہ سیاحت نے اپنے کتابچہ میں ہندوستان کی اس عظیم الشان مقبول تاریخی سنگ مرمر سے تعمیر کردہ عمارت کا ذکر تک نہیں کیا تھا جبکہ ریاست میں ترقیاتی پراجکٹس کی تفصیلی فہرست جاری کی گئی تھی اور تاج محل کو نظرانداز کردیا گیا۔ اس کے بعد تاج محل کے بارے میں بی جے پی کے ایک اور رکن اسمبلی نے تاج محل کو تاریخ ہند پر داغ قرار دیا اور بی جے پی رکن پارلیمنٹ ونئے کٹیار نے اسے اصل میں شیومندر قرار دیا تاہم حال ہی میں گورکھپور میں ایک جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے چیف منسٹر آدتیہ ناتھ یوگی نے تاج محل کو ’’ہندوستان کی شان‘‘ قرار دیا اور اسے عالمی سطح کی اعلیٰ ترین یادگار کہا۔ بی جے پی قائدین کی جانب سے دیئے گئے حالیہ بیانات کے بارے میں پوچھے جانے پر گارگ نے کہاکہ ایک خاندان کے اندر بھی اپنی رائے ہوتی ہے اور وہ مختلف بیانات دیتے ہیں جبکہ تاریخ دانوں اور ماہرین آثار قدیمہ نے اس کہانی کو مسترد کردیا ہے تاج محل کو مغل شہنشاہ شاہ جہاں اپنی اہلیہ ممتاز محل کی یاد میں تعمیر کیا تھا جبکہ یہ ایک مندر تھا۔

TOPPOPULARRECENT