Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / مند سور: کرفیو کے بعد بھی پرتشدد مظاہرے جاری

مند سور: کرفیو کے بعد بھی پرتشدد مظاہرے جاری

کئی مقامات پر مشتعل کسان آتشزنی و پتھراؤ میں ملوث ۔ ریلوے پٹریوں کو نقصان سے ٹریفک متاثر

مندسور، 7 جون (سیاست ڈاٹ کام) مدھیہ پردیش کے مندسور ضلع میں کسانوں کی تحریک میں کل چھ افراد کی موت کے بعد عائد کئے گئے کرفیو کے باوجود بھی آج ضلع کے کئی حصوں میں مظاہرین نے پر تشدد مظاہرہ کیا۔ ضلع کے ملہارگڑھ میں مشتعل مظاہرین نے ریلوے پٹریوں کو نقصان پہنچایا، جس سے نیمچ۔مندسور سے لے کر راجستھان کے چتورگڑھ کے درمیان ریلوے ٹریفک متاثر ہونے کی خبر ہے ۔ کل پپلیامنڈی میں کسانوں کے پر تشدد احتجاج اور پولیس ومظاہرین کے مابین تصادم کے بعد مبینہ طور پر پولیس کی فائرنگ میں چھ کسانوں کی موت ہو گئی تھی۔ اس کے بعد پپلیامنڈی سمیت مندسور ضلع ہیڈکوارٹر اور کئی مقامات پر کرفیو لگا دیا گیا تھا، اس کے باوجود آج صبح لوگوں کو سمجھانے برکھیڑاپنت پہنچے کلکٹر سوتنتر کمار سنگھ کے ساتھ مظاہرین نے مارپیٹ تک کی۔ اس کا ویڈیو بھی سامنے آیا ہے جس میں کچھ لوگ ان کے ساتھ مار پیٹ اور براسلوک کر رہے ہیں۔ صبح کے اس واقعہ کے بعد کئی مقامات سے آتش زنی کی خبریں ملی ہیں۔ ضلع میں ایک اے ٹی ایم، ایک فیکٹری، ایک ٹول پلازہ پر پتھراؤ اور آگ لگانے کی کوشش کی خبر مل رہی ہے ، اگرچہ اس بارے میں کسی اعلی افسرسے بات نہیں ہو سکی ہے ۔ وہیں ضلع کے سیتامؤ میں بھی کسانوں نے پر تشدد مظاہرہ کیا۔ نزدیکی نیمچ اور دیواس ضلع سے بھی کسانوں کے کئی مقامات پر مشتعل ہونے اور تھانوں پر پتھراؤ کرنے کی کوششوں کی خبر سامنے آ رہی ہے ۔ وہیں ایک قومی نیوز چینل کے مدھیہ پردیش کے صحافی برجیش راجپوت پر بھی مندسور میں مظاہرین نے حملے کی کوشش کی۔ گاوں والوں کا الزام تھا کہ میڈیا ان کی تحریک کو پرتشدد بناکر پیش کر رہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT