منوج تیواری باؤنسر سے بال بال بچ گئے

کولکتہ۔ 17 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) بنگال کے ابھرتے بیٹسمین منوج تیواری جن کا نام ورلڈ کپ 2015ء کی ممکنہ 30 کھلاڑیوں کی فہرست میں بھی شامل ہے، آج وہ باؤنسر سے بال بال بچ گئے۔ یہ واقعہ کولکتہ کے تاریخی میدان ایڈن گارڈنس میں رانجی ٹرافی کے مقابلے کے دوران پیش آیا۔ کرناٹک اور بنگال کے درمیان کھیلے جارہے مقابلے کے 38 ویں اوور میں ابھینیو متھن کی

کولکتہ۔ 17 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) بنگال کے ابھرتے بیٹسمین منوج تیواری جن کا نام ورلڈ کپ 2015ء کی ممکنہ 30 کھلاڑیوں کی فہرست میں بھی شامل ہے، آج وہ باؤنسر سے بال بال بچ گئے۔ یہ واقعہ کولکتہ کے تاریخی میدان ایڈن گارڈنس میں رانجی ٹرافی کے مقابلے کے دوران پیش آیا۔ کرناٹک اور بنگال کے درمیان کھیلے جارہے مقابلے کے 38 ویں اوور میں ابھینیو متھن کی گیند تیواری کی ہیلمٹ پر جیسے ہی لگی، میدان پر ماحول تبدیل ہوگیا اور مہمان ٹیم کے تمام کھلاڑی فوری طور پر دوڑتے ہوئے تیواری کے قریب پہنچ گئے۔ ہائیکورٹ سرے سے بولنگ کررہے متھن بھی تیواری کے قریب پہنچ گئے جس کے ساتھ ہی فزیو بھی دوڑتے ہوئے بیٹسمین کے پاس پہنچے۔ اتفاق سے آسٹریلیائی آنجہانی بیٹسمین فلپ ہیوز کی طرح کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا بلکہ گیند تیواری کی نئی سفید ہیلمٹ پر لگی جس پر شگاف آگیا ۔

تیواری نے ابتداء میں سفید ہیلمٹ استعمال کی تھی لیکن اس واقعہ کے بعد انہوں نے اپنی مستقل نیلے رنگ کی ہیلمٹ پہن لی۔ دریں اثناء کچھ دیر بعد ونئے کمار نے انہیں بولڈ کرتے ہوئے پویلین کی راہ دکھائی ۔ اپنی اننگز مکمل کرنے کے بعد منوج تیواری کو احتیاطی تدابیر کے طور پر دواخانہ منتقل کیا گیا جہاں ان کا ایم آر آئی کیا گیا۔رانجی ٹرافی کے مقابلوں میں یہ پہلا واقعہ نہیں بلکہ کٹک میں بھی ایسا ہی ایک واقعہ پیش آیا جہاں گجرات کے بیٹسمین بھارگو میرائی کی ہیلمٹ کو بھی گیند لگی اور اس مرتبہ بولر بپلاب سمنترے تھے۔

TOPPOPULARRECENT