Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / مودی اور بہاری کی جنگ

مودی اور بہاری کی جنگ

مودی اور بہاری کی جنگ
دہلی کے بعد بہار ۔ 17 ماہ میں دوسرا جھٹکا
حیدرآباد ۔ 9 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : بی جے پی ملک میں عوامی اعتماد سے محروم ہورہی ہے ۔ وزیر اعظم نریندر مودی کا جادو 17 ماہ میں ختم ہوگیا جس کا ثبوت دہلی اور بہار ہے ۔ دونوں ریاستوں کے عوام نے بی جے پی اور اس کی حلیف و حواری جماعتوں کو یکسر مسترد کردیا ہے ۔ دہلی میں بی جے پی کی شکست کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی نے بہار کے انتخابات کو وقار کا مسئلہ بناتے ہوئے اپنی ساری توانائی بہار پر جھونک دی تھی اور بڑے پیمانے پر انتخابی مہم میں حصہ لیا تھا ۔ تاہم نتائج ان کے لیے مایوس کن ثابت ہوئے ۔ انتخابی شیڈول کی اجرائی کے بعد بی جے پی نے آخری مرحلے کی رائے دہی تک بڑے پیمانے پر انتخابی مہم چلائی ایسا لگ رہا تھا کہ یہ الیکشن ریاست بہار کا نہیں سارے ملک کا ہے۔ بی جے پی نے بہار انتخابات کے لیے وزیر اعظم نریندر مودی کو ’ اسٹار کیمپنیر ‘ کے طور پر پیش کیا اور انہیں 31 انتخابی جلسوں سے خطاب کرایا ۔ انتخابی شیڈول کی اجرائی سے قبل وزیر اعظم نے بہار میں ایک جلسہ عام کے دوران بہار کو ایک لاکھ 25 ہزار کروڑ روپئے کے خصوصی پیاکیج کا اعلان کیا ۔ وزیر اعظم کے جلسوں میں عوام نے ہزاروں کی تعداد میں شرکت کی ۔ لالو پرساد یادو ، نتیش کمار اور سونیا گاندھی کو زبردست نشانہ بنایا باوجود اس کے بہار کے عوام نے بی جے پی کے حق میں ووٹ نہیں دیا اور نہ ہی 125 لاکھ کروڑ کے پیاکیج پر بہار کے عوام نے بھروسہ کیا ۔ بہار کے نتائج وزیر اعظم نریندر مودی اور بی جے پی کے اعلیٰ قائدین کیلئے بہت بڑا دھکا ثابت ہوئے ہیں اور بی جے پی کے قائدین کراری شکست کو برداشت نہیں کرپا رہے ہیں ۔ واضح رہے کہ گذشتہ سال 7 فروری کو دہلی میں منعقد ہوئے انتخابات پر بھی وزیر اعظم نریندر مودی کو بہت ساری امیدیں وابستہ تھیں دہلی میں بھی نریندر مودی نے کئی جلسوں سے خطاب کیا تھا لیکن اروند کجریوال نے تاریخی کامیابی حاصل کرتے ہوئے وزیر اعظم اور بی جے پی کی امیدوں پر پانی پھیر دیا تھا ۔۔

TOPPOPULARRECENT