Saturday , November 18 2017
Home / Top Stories / ’’مودی نے کبھی سرد ، کبھی گرم ہند۔ پاک تعلقات کا ’رِی سٹ‘ بٹن دَبا دیا ‘‘

’’مودی نے کبھی سرد ، کبھی گرم ہند۔ پاک تعلقات کا ’رِی سٹ‘ بٹن دَبا دیا ‘‘

پالیسی پر بار بار تبدیلی ’’سفارتی رقص‘‘ ، امن مذاکرات کی سمت ایک قدم ، وزیراعظم ہند کے دورۂ لاہور پر امریکی میڈیا کے تبصرے
واشنگٹن۔ 26 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکی ذرائع ابلاغ نے وزیراعطم نریندر مودی کے اچانک و حیرت انگیز دورۂ لاہور کو ہندوستان اور پاکستان کے مابین تعلقات میں ایک نمایاں پیشرفت قرار دیا ہے اور کہا کہ اس (دورہ) سے دونوں ممالک کے درمیان  عبوری مصالحتی عمل کو ایک نئی تحریک وجہت حاصل ہوگی۔ سی این این نے کہا کہ ’’ہندوستان وزیراعظم نریندر مودی نے جمعہ کو پاکستان کا اچانک اور حیرت انگیز دورہ کیا جو ان دونوں پڑوسیوں کے سردمہری پر مبنی تعلقات میں ایک نئی گرمجوشی کا اشارہ ہے۔ ’’واشنگٹن پوسٹ‘‘ نے لکھا کہ مودی نے کبھی سرد کبھی گرم تعلقات میں دوبارہ تبدیلی (ری سیٹ) کا بٹن دبا ہے جس کے نتیجہ میں دونوں پڑوسیوں کے درمیان آئندہ ماہ سرکاری مذاکرات کی بحالی کی راہ ہموار ہوئی ہے‘‘۔ ’’وال اسٹریٹ جرنل‘‘ نے لکھا ہے کہ مودی کے اچانک و حیرت انگیز اقدام سے توقع ہے کہ نیوکلیئر طاقت کے حامل دو پڑوسیوں کے درمیان عبوری مصالحتی عمل کو ایک نئی تقویت حاصل ہوگی۔ ’’شکاگو ٹریبیون‘‘ نے لکھا کہ ’’یہ دونوں ممالک کے تعلقات میں پیشرفت کی علامت ہے‘‘۔ ’’ٹائم میگزین‘‘ نے لکھا کہ مودی نے 26 مئی 2014ء کو برسراقتدار آنے کے بعد اپنی حلف برداری کے تمام جنوب ایشیائی قائدین کو مدعو کیا تھا لیکن کل کا دورہ لاہور گزشتہ سال ان کے برسراقتدار آنے کے بعد سے تاحال ان کا سب سے بڑا سفارتی اقدام تھا

جس نے سب کو حیرت زدہ کردیا۔  مشہور و معروف ’’نیشنل پبلک ریڈیو‘‘ نے کہا کہ ’’ایک دہائی کے دوران ہندوستان کے کسی وزیراعظم کا یہ پہلا دورۂ پاکستان ہے۔ ’’لاس اینجیلس ٹائمس‘‘ کے مطابق دورۂ لاہور کے ذریعہ مودی نے ایک عرصہ سے مسائل کے شکار باہمی تعلقات کو ایک نئی زندگی دی ہے۔ ’’نیویارک ٹائمس‘‘ نے جو اکثر وزیراعظم کی مذمت کیا کرتا ہے، مودی کے اچانک دورۂ لاہور کی نمایاں اہمیت کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا کہ ہندوستانی رہنما (مودی) ماضی میں ایک پالیسی سے دوسری پالیسی تبدیل کرتے رہے ہیں اور ان کے اس دورہ کو ’’سفارتی رقص‘‘ قرار دیا۔ وزیراعظم مودی نے گزشتہ روز ٹوئٹر پر اپنے اس اچانک دورہ کی اطلاع دی تھی جس کے فوری بعد امریکہ کے تمام میڈیا ادارے بھی جنوبی ایشیا کی اس بریکنگ نیوز کو اپنے قارئین تک پہنچانے کیلئے ٹوئٹر اور دیگر ذرائع کے علاوہ ایس ایم ایس اور ای میلس کا بھرپور استعمال کیا۔ امریکی خارجہ تعلقات کونسل کے صدر رچرڈ ہاس مودی کے دورۂ لاہور کو ’’غیرمتوقع لیکن قابل خیرمقدم‘‘ قرار دیا اور کہا کہ ہند۔ پاک کے سفارتی معمول کو اعلیٰ سطح پر پہونچانے کی ضرورت ہے۔ نشیب و فراز کے شکار ہند ۔ پاک تعلقات میں مودی نے ڈرامائی عنصر ڈالتے ہوئے گزشتہ روز لاہور میں توقف کے ذریعہ ساری دنیا کو حیرت میں ڈال دیا تھا۔ انہوں نے کابل سے واپسی کے دوران لاہور میں توقف کرتے ہوئے وزیراعظم پاکستان نواز شریف سے ملاقات کی اور ان (شریف) کی نواسی کی شادی کی تقریب میں شرکت کی تھی۔

TOPPOPULARRECENT