Saturday , December 15 2018

مودی کو گجرات میں اعظم ترین نشستوں سے محروم کرنے کی حکمت عملی

احمد آباد 24 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے فیصلہ کیا ہے کہ گجرات میں مستحکم انتخابی حلقوں پر مرکزی اور قبائیلی پٹی پر لوک سبھا انتخابات کیلئے توجہ مرکوز کی جائے گی تا کہ بی جے پی کے وزارت عظمی کے امیدوار نریندر مودی ریاست میں بیشتر نشستوں سے محروم ہوسکیں ۔ بی جے پی نے گجرات میں تمام 26 نشستوں پر کامیابی حاصل کرنے کا حدف مقرر کیا ہے تا

احمد آباد 24 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے فیصلہ کیا ہے کہ گجرات میں مستحکم انتخابی حلقوں پر مرکزی اور قبائیلی پٹی پر لوک سبھا انتخابات کیلئے توجہ مرکوز کی جائے گی تا کہ بی جے پی کے وزارت عظمی کے امیدوار نریندر مودی ریاست میں بیشتر نشستوں سے محروم ہوسکیں ۔ بی جے پی نے گجرات میں تمام 26 نشستوں پر کامیابی حاصل کرنے کا حدف مقرر کیا ہے تا کہ مودی کی قیادت کو ان کی آبائی ریاست سے حوصلہ افزائی حاصل ہوسکے۔ حالانکہ بی جے پی نے اسمبلی انتخابات میںبہتر مظاہرہ کیا تھا لیکن 2004 اور 2009 کے لوک سبھا انتخابات میں گجرات نے بی جے پی کا مظاہرہ اوسط تھا حالانکہ مودی لہر ہونے کا ماحول تیار کیا گیا ہے لیکن کانگریس نے لوک سبھا انتخابی نتائج گجرات میں بی جے پی کی پیش قیاسی کے مطابق نہیں ہونے کو یقینی بنانے کیلئے حکمت عملی تیار کی ہے۔ کانگریس کے ترجمان منیش دوشی نے کہا کہ کانگریس تقریبا ان تمام نشستوں پر کامیابی حاصل کرے گی جن پر گذشتہ مرتبہ کامیاب رہی تھی بلکہ ان سے ایک یا دو نشستیں زیادہ حاصل کرے گی۔ 2009 میں کانگریس نے 26 لوک سبھا نشستوں میں سے 11 پر اور 2004 میں 12 پر کامیابی حاصل کی تھی۔

وسطی گجرات کانگریس کا مرکز توجہ ہے۔ قبائیلی پٹی کے علاوہ سو راشٹر کی چند نشستوں پر بھی کانگریس کو کامیابی کی امید ہے۔ گجرات میں قبائیلی پٹی شمال میں بناس کھنٹہ سے جنوب میں ولساڈ تک پھیلی ہوئی ہے۔سوراشٹرا کی چند اور کچھ کی چند نشستوں پر بھی گجرات کانگریس کو کامیابی کا یقین ہے۔وسطی گجرات کا قبائیلی علاقہ 2002 کے فسادات کے بعد بی جے پی کی تائید میں لہر چلنے کے باوجود کانگریس کا حامی رہ چکا ہے ۔ گجرات کانگریس کے ترجمان نے کہا کہ کانگریس نے لوک سبھا نشستوں کو چار زمروں میں تقسیم کیا ہے اور اسی کے مطابق امیدواروں کے نام بی جے پی سے پہلے کانگریس کی مضبوط نشستوں کیلئے ظاہر کئے جاچکے ہیں۔ اس کے نتیجہ میں بی جے پی پسپہ ہوگئی ہے۔ بی جے پی کیلئے کانگریس کی مضبوط نشستوں کیلئے امیدواروں کا انتخاب مشکل ہوگیا ہے۔ اسے امیدوار دستیاب نہیں ہورہے ہیں اور کانگریس سے انحراف کر کے بی جے پی میں شمولیت اختیار کرنے والوں پر بی جے پی انحصار کرنے پر مجبور ہوگئی ہے۔ کانگریس نے اپنے مستحکم حلقوں میں انتخابی مہم میں شدت پیدا کردی ہے تا کہ زیادہ سے زیادہ نشستیں حاصل کرسکے ۔ قبائیلی علاقوں میں عام جلسے اور جلوس منعقد کئے جارہے ہیں ۔ احمد پٹیل جیسے سینئر قائدین نائب صدر راہول گاندھی انتخابی مہم میں شرکت کررہے ہیں۔ راہول گاندھی حال ہی میں گجرات کا دو روزہ دورہ کرچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT