مودی کی تقریر کو سمجھا نہیں گیا آر ایس ایس

نئی دہلی ۔ 21 ۔ فروری : ( سیاست ڈاٹ کام ) : وزیر اعظم نریندر مودی کی جاریہ ہفتہ عیسائی مذہبی جلسہ میں تقریر کی مختلف گوشوں نے سراہنا کی لیکن آر ایس ایس نے کہا کہ مودی نے اسی بات کا اعادہ کیا ہے جو وہ تب سے کہتے آرہے ہیں جب وہ چیف منسٹر گجرات تھے ۔ آر ایس ایس کے ترجمان میں شائع اداریہ میں کہا گیا کہ سائرو مالا بار کیتھولک چرچ کے زیر اہتمام منعقدہ پروگرام میں نریندر مودی نے سوامی وویکانند کی شکاگو تقریر کا حوالہ دیا اس کے ساتھ ہی دانشوران اور سیکولر ذہن کے حامل میڈیا نے سیاسی نتائج اخذ کرنا شروع کردیا ۔ یہاں تک کہا گیا کہ یہ ہندوتوا تنظیموں کے لیے وزیر اعظم کا پیام ہے۔ یہ بھی کہا گیا کہ مودی نے خود کو ’ سیکولر ‘ لیڈر کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کی ہے حالانکہ ان کی تقریر کا بغور جائزہ لیا جائے تو صاف معلوم ہوگا کہ انہوں نے سماج کے تمام طبقات کے لیے ملک کے سماجی اوصاف کا اعادہ کیا ہے ۔ انہوں نے ’ تمام کو قبول کرنے اور کسی کی خوشامد نہ کرنے ‘ کی بات کہی ۔ وہ اس وقت سے ایسا کہہ رہے ہیں جب چیف منسٹر گجرات تھے ۔ یہ اوصاف ہندوستان میں ویدوں کے دور سے جاری ہیں اور بلاامتیاز مذہبی وابستگی اس پر عمل ہورہا ہے ۔ نریندر مودی نے ہندو طرز زندگی کو مذہبی ہم آہنگی کی مشعل راہ قرار دیا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT